Published From Aurangabad & Buldhana

ریاستی سطح پر 12 بلوتےودار اکنامک ڈویلپمنٹ کارپوریشن قائم کرنے اور اسے فوری طور پر فعال بنانے کے لیے پہل کریں گے۔۔۔۔۔۔ٹوپے

جالنہ (محمد اظہر فاضل)
مہاراشٹرا ریاست بارہ بلوتے دار فیڈریشن کے صدر کلیان دڑے ، راجندر راکھ ، جالنا سٹی کمیٹی صدر شیخ محمود ، وسنت جادھو ، ایڈوکیٹ سنجے کالبنڈ ، ڈاکٹر وشال دھانورے اور دیگر عہدیداروں کے ایک وفد نے جمعرات کی صبح ممبئی میں ریاستی وزیر صحت راجیش ٹوپے کی رہائش گاہ پر ان سے ملاقات کی اور ریاست کے 12 بلوتداروں کے مسائل اور ان کے سامنے پیش کئے۔ 15 منٹ کی بحث کے دوران مہاراشٹر اسٹیٹ بارا بلوتیدار مہا سنگھ کے صدر کلیان دڑے نے کہا کہ اگرچہ ریاست میں مہاوکاس اگھاڑی حکومت نے بارا بلوتیدار اکنامک ڈویلپمنٹ کارپوریشن کی تجویز دی تھی ، لیکن فیڈریشن ابھی تک قائم نہیں کی گئی ہے۔ یہ تجویز ابھی زیر التوا ہے۔ گذشتہ دو سالوں سے چل رہی کورونا وبا نے ریاست میں 12 بلوتےودار وں کا کاروبار مکمل طور پر بند کردیا ہے۔ کاروبار بند ہونے کی وجہ سے بارہ بلوتے دار مالی بحران میں ہیں اور کوئی بھی بینک قرض دینے کو تیار نہیں ہے کیونکہ وہ معیار پر پورا نہیں اترتے ہیں۔

مالی بحران کے باوجود بینکوں سے قرضوں کی عدم فراہمی کی وجہ سے گذشتہ دو سالوں سے بند کاروبار کو دوبارہ تعمیر کرنا مشکل تھا۔ لہذا ، ریاست کے 12 بلوتے داروں کو ریاستی حکومت کی مالی مدد کی ضرورت ہے اور درخواست کی گئی ہیکہ بارہ بلوتےدار اقتصادی ترقی کارپوریشن کو قائم کرتے ہوئے اسے امداد دیکر فوری طور پر ایکٹیو کرے ، وفد نے بحث کے دوران وزیر صحت راجیش ٹوپے سے درخواست کی۔ اس مطالبے کی سنگینی کو تسلیم کرتے ہوئے ، ٹوپے نے وفد کے عہدیداروں کو یقین دلایا کہ وہ کارپوریشن کو فوری طور پر تشکیل دینے اور اس کو چلانے کے لئے ریاستی حکومت کی سطح پر پہل کریں گے۔ کورونا کی وبا کی وجہ سے کاروبار بند ہونے کے سبب بارہ بلیوتار برادری کے بہت سے افراد نے خودکشی کرلی ہے۔

وفد نے خودکشی کرنے والے افراد کے اہل خانہ کو ریاستی حکومت سے فوری طور پر مالی مدد فراہم کرنے اور کورونا کے تناظر میں ریاست پر لگائی گئی لاک ڈاؤن پابندی میں فوری نرمی کرنے کے مطالبے پر بھی وزیر صحت ٹوپے کی توجہ مبذول کرائی۔ وزیر اعلیٰ ادھو ٹھاکرے اور نائب وزیر اعلیٰ اجیت پوار ریاست کے 24 اضلاع میں جہاں کورونا مریضوں کی تعداد کم ہے لاک ڈاؤن اٹھانے کے بارے میں مثبت سوچ رہے ہیں اور اگلے دو دنوں میں ٹھوس فیصلہ لیا جائے گا۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!