Published From Aurangabad & Buldhana

69 ہزار اسسٹنٹ ٹیچروں کی تقرری تین مہینے کے اندر مکمل کی جائے: الہ آباد ہائی کورٹ

لکھنؤ: الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنؤ ڈویژن بنچ نے بدھ کو اترپردیش کے پرائمری اسکولوں میں 69 ہزار اسسٹنٹ ٹیچروں کی تقرری میں حکومت کی جانب سے طے کیے گئے اصولوں پر مہر لگا دی ہے۔ جسٹس پنکج کمار جیسوال اور جسٹس کرونیش سنگھ پوار کی ڈویژن بنچ نے حکومت کی جانب سے طے کیے گئے اصولوں کو صحیح قرار دیتے ہوئے ریاستی حکومت کو حکم دیا ہے کہ وہ تین مہینوں کے اندر تقرری کی کارروائی پوری کرے۔ عدالت نے حکومت کی جانب سے کٹ آف کے نمبرات کو بڑھانے کے فیصلے کو صحیح مانا ہے۔

گزشتہ ڈیڑھ سالوں سے التواء کا شکار اس معاملے میں ریاستی حکومت سمیت دیگر امیدواروں کی خصوصی اپیل پر عدالت نے 3 مارچ کو سماعت پوری ہونے کے بعد اپنا فیصلہ محفوظ کرلیا تھا۔ اس میں سنگل بنچ کے اس فیصلے و حکم کو چیلنج کیا گیا تھا جس میں انٹرنس امتحان میں پاسنگ مارک جنرل کٹیگری کے لئے کم از کم 45 فیصدی اور اور ریزرو کٹیگری کے لئے 40 فیصدی رکھے جانے کا ریاستی حکومت کو ہدایت دی گئی تھی۔ گزشتہ سال کے آغاز میں ہوئے انٹرنس امتحان کے فوراً بعد ریاستی حکومت نے جنرل زمرے کے امیدواروں کے لئے کم از کم نمبر 65 فیصدی اور ریزرو زمرے کے امیدواروں کے لئے 60 فیصدی نمبر لانا لازمی قرار دیا تھا۔ جس کے خلاف سنگل بنچ کے سامنے کئی عرضیاں داخل کی گئی تھیں۔ گزشتہ سال سے ان اپیلوں پر حتمی سماعت چل رہی تھی۔

ملحوظ رہے کہ ریاست کے پرائمری اسکولوں میں 69 ہزار اسسٹنٹ ٹیچروں کی تقرری کے لئے 5 دسمبر 2018 کو نوٹیفکیشن جاری کر کے آن لائن درخواست کا عمل شروع کیا گیا تھا۔ چھ جنوری 2019 کو 69 ہزار امیدواروں کی تقرری کے لئے انٹرنس امتحان کا انعقاد کیا گیا تھا ۔اس میں 410440 امیدواروں نے امتحان دیا تھا اور 21 ہزار 26 امیدواروں نے امتحان چھوڑ دیا تھا۔

UNI

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!