Published From Aurangabad & Buldhana

‎18 مہینے بعد بھی بہار نریندر مودی کے 1,25,000 کروڑ روپئے کے انتظار میں :- RTI رپورٹ

سکّم اور جموں و کشمیر کا بھی یہی حال

ممبئی :-اکتوبر 2015 میں بہار کے اسمبلی انتخابات کے 18 مہینہ بعد بھی بہار وزیر اعظم نریندر مودی کے ذریعہ اعلان شدہ 1.25 لاکھ کروڑ کی مدد کے انتظار میں ہے یہ معلومات RTI کے ذریعہ موصول ہوئی۔

ممبئی کے آر ٹی آئی کارکن انیل گالگلی نے دسمبر 2016 میں مرکزی وزیر معیشت کے پاس آر ٹی آئی درخواست ڈالی تھی جس میں نریندر مودی کے ذریعہ مختلف ریاستوں کے لئے اعلان شدہ بھاری معاشی مدد سے متعلق پوچھا تھا۔

ساتھ انیل نے ان معاشی مدد سے متعلق لئے اقدامات کے بارے میں بھی پوچھا تھا۔ شروع میں معاشی وزارت کے نائب ڈائریکٹر آنند پرمار نے سیدھے جواب دینے سے دور رہے۔

انیل نے کہا کہ “ وزیر اعظم مودی نے 18 اگست 2015 کو بہار کے لئے 125,003 کروڑ روپئے کے پیکیج کا اعلان کیا تھا لیکن پرمار نے آر ٹی آئی کے جواب میں بتایا کہ آج تک ایک روپیہ بھی نہیں دیا گیا۔”
“یہ انتہائی شرم کی بات ہیکہ ملک کے وزیر اعظم کے ذریعہ عوام کو کیا گیا وعدہ پر دیڑھ سال میں آج تک کوئی اقدام نہیں ہوا۔ ساتھ ہی بی جے پی آج بھی پیکیج کے اعلانات جاری ہے۔”
بی جے پی حکومت شروع ہے سے جملہ سرکار ثابت ہوئی ہے جس نے صرف وعدے کیے ہیں اسے پورا نہیں کیا۔
کچھ اسی طرح کا معاملہ جموں و کشمیر کے ساتھ بھی ہے۔ 7 نومبر 2015 کو مودی نے جموں و کشمیر کے لئے 80,068 کروڑ روپئے کی مدد کا اعلان کیا تھا۔ لیکن ابھی تک کوئی پیسہ نہیں دیا گیا۔
صرف یہیں پر نہیں بلکہ 15 جون 2016 کو سکّم کے لیے 43,589 کروڑ روپئے کی مدد کا اعلان ہوا تھا جو ابھی تک نہیں ملا۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!