Published From Aurangabad & Buldhana

یدی یورپا کے خط میں ایسا کیا تھا کہ گورنر نے اکثریت والے کانگریس – جے ڈی ایس اتحاد کو نہیں دیا موقع ؟

نئی دہلی : بی ایس یدی یورپا نے کرناٹک میں حکومت سازی کے دعوی کا ساتھ ساتھ گورنر کو جو خط سونپا تھا ، اس پر سپریم کورٹ میں جمعہ کو سماعت ہوئی۔ سپریم کورٹ نے ہفتہ شام چار بجے فلور ٹیسٹ کرانے کا حکم دیا ہے۔ اٹارنی جنرل مکمل روہتگی عدالت میں بی جے پی کی طرف سے پیش ہوئے ۔انہوں نے کانگریس – جے ڈی ایس اتحاد اور بی جے پی دونوں کے خط عدالت میں پیش کیا۔
کانگریس جے ڈی ایس نے جو خط پیش کیا تھا ، اس میں دونوں پارٹیوں کے ممبران اسمبلی کے دستخط تھے جبکہ یدی یورپا نے جو خط پیش کیا تھا اس میں صرف ممبران اسمبلی کے نام تھے۔

دنوں خطوط کو دیکھنے کے بعد عدالت نے سوال کیا کہ گورنر وجوبھائی والا نے کس بنیاد پر بی ایس یدی یورپا کو حکومت بنانے کیلئے مدعو کیا ۔ عدالت نے سوال کیا کہ اس خط میں ایسا کیا ہے ، جس سے گورنر مطمئن ہوگئے۔
جسٹس اے کے سیکری کی صدارت والی تین ججوں کی بینچ نے سوال کیا کہ وجو بھائی والا نے حکومت بنانے کیلئے کانگریس – جے ڈی ایس اتحاد کی بجائے یدی یورپا کو کیوں منتخب کیا ؟ جبکہ کانگریس – جے ڈی ایس اتحاد کے پاس ایوان میں اکثریت ہے ۔ اس کے جواب میں بی جے پی کی طرف سے عدالت میں پیش مکل روہتگی نے کہا کہ کانگریس – جے ڈی ایس اتحاد ناپاک ہے۔
سپریم کورٹ نے تبصرہ کیا ہے کہ یہ نمبروں کا کھیل ہے اور گورنر کو دیکھنا چاہئے کہ کس پارٹی کے پاس سب سے زیادہ نمبر ہے۔ جسٹس سیکری نے کہا کہ فلور ٹیسٹ اس کا سب سے بہتر آپشن ہوسکتاہے ۔ انہوں نے سوال کیا کہ فلور ٹیسٹ ہفتہ کو ہی کیوں نہیں ہوسکتا ؟ اس پر کانگریس نے کہا کہ وہ فلور ٹیسٹ کیلئے تیار ہے۔ کانگریس نے اپنے ممبران اسمبلی کی سیکورٹی کا مطالبہ کیا ۔ وہیں بی جے پی کی طرف سے مکل روہتگی نے کہا کہ انہیں اور وقت چاہئے ، اس پر عدالت نے کہا کہ اس کیلئے مزید وقت نہیں دیا جاسکتا۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!