Published From Aurangabad & Buldhana

ہندؤں کیلئے کروڑہاکروڑ کی سبسڈی !

کل ہند اتحاد المسلمین کے صدر اور رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے کہا کہ حج سبسڈی اگر خوشامدانہ کارروائی تھی تو ہندو زائرین کو دی جانے والی سبسڈی کیا ہے؟ 2014 میں UPAسرکار نے کمبھ میلہ کیلئے 1150کروڑ روپے مختص کئے تھے۔ 2016میں مودی سرکار نے مدھیہ پردیش کے سمستھ مہا کمبھ میلہ کیلئے 100کروڑ روپے دئیے جبکہ ریاستی حکومت نے 3400کروڑ روپے خرچ کئے۔ کرناٹک کی کانگریس سرکار چاردھام یاترا کیلئے فی کس 20 ہزار روپے دیتے ہے۔ یوپی کی یوگی سرکار نے کاشی، ایودھیا، متھرا کی یاترا کیلئے 800کروڑ روپے مختص کئے۔

اس فیصلہ سے حاجیوں کی تعداد کم نہیں ہوگی:حافظنوشاداعظمیٰ
نئی دہلی: آل انڈیا حج سیواسمیتی کے قومی صدر اور حج کمیٹی آف انڈیا کے سابق ممبر حافظ نوشاداعظمی نے آج یہاں جاری ایک بیان میں حج سبسڈی کو یک لخت ختم کرنے کے فیصلہ پر شدید رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کا یہ فیصلہ مسلمانوں کے ساتھ سوتیلے سلوک کے متراد ف ہے نیز اس فیصلہ سے حاجیوں کی تعداد میں کمی نہیں ہوگی۔ انہوں نے واضح کیا کہ سپریم کورٹ نے 2012میں حج سبسڈی کے سلسلے میں کہا تھا کہ اسے آہستہ آہستہ 2022تک ختم کردیا جائے لیکن آج حکومت نے اسے فوری طور پر ختم کرکے عدالت عالیہ کے حکم سے روگردانی کی ہے ۔ خیال رہے کہ حکومت نے رواں سال سے حج سبسڈی ختم کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ حج کمیٹی آف انڈیا کے سابق ممبر حافظ نوشاد نے حکومت کو مشورہ دیا کہ عازمین حج کے سفر کیلئے انٹرگلوبل ٹینڈر جاری کیا جائے اور اس کا اختیارحج کمیٹی آف انڈیا کو دیا جائے تاکہ ایئر انڈیا من مانا کرایہ نہ وصول کرسکے ۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!