Published From Aurangabad & Buldhana

کووڈ-19 وبا کے دوران نمونیا سے بچ کر رہیں

نئی دہلی: عالمی وبا کورونا وائرس (کووڈ-19) کے پھیلنے کے ساتھ ساتھ اب سردی اور آلودگی سے متعلق بیماریوں میں اضافہ ہو رہا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ ان تمام وجوہات کی وجہ سے نمونیا میں مبتلا ہونے کا خطرہ بڑھ گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : اقلیتیں اویسی کی بین پر ناچنا بند کریں… سید خرم رضا
سردیوں کے موسم میں بچوں سے لے کر بوڑھوں تک کسی کو بھی نمونیا ہو جاتا ہے، لیکن کووڈ -19 وبا پھیلنے کی وجہ سے نمونیا کا خطرہ بڑھ گیا ہے۔ 12 نومبر کو نمونیا کا عالمی دن منایا جاتا ہے تاکہ لوگوں کو نمونیا سے آگاہ کیا جائے۔ اس دن کی شروعات اقوام متحدہ نے 12 نومبر 2009 کو کی تھی، جس کا مقصد دنیا بھر کے لوگوں میں نمونیا سے متعلق آگاہی پھیلانا تھا۔

نمونیا آج کل ایک عام بیماری بن گئی ہے۔ تاہم، یہ بیماری اب بھی پوری دنیا میں بچوں کی موت کی سب سے بڑی وجہ ہے۔ اسٹرپٹوکوکس نمونیا نامی بیکٹیریا اس بیماری کا سب سے بڑا سبب ہے۔ یہ بیکٹیریا پھیپھڑوں کو متاثر کرتا ہے اور سانس کے نظام کو متاثر کرتا ہے۔ کورونا وائرس کی طرح جب آپ کا مدافعتی نظام کمزور ہوتا ہے تو نمونیا کے جراثیم آپ پر حملہ کرتے ہیں۔ نمونیا ایک مہلک بیماری ہے، لہذا جب بھی آپ علامات دیکھیں تو فوراً ڈاکٹر سے رجوع کریں۔ نزلہ کی علامت کی طرح اس کی علامات کی نشاندہی کرنا اکثر مشکل ہوتا ہے۔ کووڈ-19 کے وبا کے وقت صورتحال اور بھی سنگین ہوگئی ہے۔

میکس اسپتال کے پلمونولوجسٹ ڈاکٹر انکت بھاٹیہ کے مطابق نمونیا کی علامات میں اچانک تیز بخار کے ساتھ سینے میں درد، پسینہ آنا اور ضرورت سے زیادہ پیشاب ہونا، سر درد، ضرورت سے زیادہ پیاس، چہرے، منہ اور آنکھوں کی سرخی، خشک کھانسی، سانس لینے کی رفتار میں اضافہ، کمرکے بل لیٹنے میں بڑھتی ہوئی دشواری، پھیپھڑوں میں سوجن، نبض کی رفتار میں اضافہ، بلغم سے خون آنا، بھوک نہ لگنے کی وجہ سے کمزوری وغیرہ اہم علامات ہیں۔ سردی اور بدلتے ہوئے موسم کی وجہ سے نمونیا ہونے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ نمونیا کی روک تھام اور علاج بھی ہماری غذا سے وابستہ ہے۔ اگر آپ اس مرض میں کھانے سے متعلق محتاط رہیں تو اس کو بہت حد تک روکا جاسکتا ہے۔ فورٹیس ایسکارٹس ہارٹ ریسرچ انسٹی ٹیوٹ، نئی دہلی میں نیورو سرجری کے ڈائریکٹر راہل گپتا کے مطابق 65 سال سے زیادہ عمر کے بزرگوں میں نمونیا، ذیابیطس، کینسر یا پھیپھڑوں کی دائمی بیماری، گردے، جگر کے مریض، تمباکو نوشی کرنے والے اور 12 ماہ سے کم عمر کے بچوں میں نمونیا کا خطرہ زیادہ ہے۔ نمونیا کی اموات میں مریضوں کی عمر ایک اہم خطرہ سمجھی جاتی ہے۔ بوڑھے لوگوں میں نمونیا کا شدید خطرہ ہے۔ کیونکہ بڑھتی عمر کے ساتھ، لوگوں میں فطری طور پر قوت استثنیٰ کمزور ہوجاتی ہے۔ حالانکہ اب ہمارے پاس نمونیا کے اچھے علاج ہیں۔

ڈاکٹر راہل گپتا نے بتایا کہ نمونیا کے جراثیم دماغ اور دل کو بھی نقصان پہنچا سکتے ہیں۔ تازہ مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ اسٹریپٹوکوکس نییمینیا بیکٹیریا خون کے دھارے میں داخل ہوسکتا ہے اور پھر دماغ اور دل تک پہنچ سکتا ہے جس کی وجہ سے دماغ اور دل کا کام متاثر ہوسکتا ہے۔ اس کے علاوہ، یہ دماغ اور ریڑھ کی ہڈی کی پرت میں میننجائٹس یعنی سوجن کا سبب بن سکتا ہے۔ ڈاکٹر بھاٹیہ کا کہنا ہے کہ نمونیا عام طور پر ایک عام صحت کا مسئلہ سمجھا جاتا ہے، لیکن یہ مسئلہ اتنا عام نہیں ہے۔ اگر اس کا بروقت علاج نہ کیا جائے تو پھر مریض کی زندگی کو بھی خطرہ ہو سکتا ہے۔ جب ہمیں نمونیا ہوتا ہے تو ہمارے پھیپھڑوں میں انفکشن ہوجاتا ہے اور اس سے سانس کا نظام متاثر ہوتا ہے۔ اس انفیکشن میں ایک یا دونوں پھیپھڑوں کی ہوا کی تھیلیوں میں مائع یا پیپ بھرجاتا ہے اور سوجن آجاتی ہے، جو بلغم یا پیپ کی کھانسی، بخار، سردی لگنے اور سانس کی قلت کا مسئلہ پیدا کرسکتا ہے۔

اندرپرستھا اپولو اسپتال کے انٹرنل میڈیسن کے ماہر ڈاکٹر راکیش کمار نے وضاحت کی کہ جب نمونیا ہوتا ہے تو ابتدائی مرحلے میں اینٹی بائیوٹکس دی جاتی ہیں۔ نمونیا سے بچنا بہت اہم ہے لہذا بچوں اور 65 سال سے زیادہ عمر کے افراد کو نمونیا سے بچاؤ کے ٹیکے لگائے جائیں۔ مدافعتی نظام کو بھی مضبوط رکھیں۔ مناسب نیند لیں، باقاعدگی سے ورزش کریں اور صحت مند غذا کھائیں۔ مضبوط مدافعتی نظام آپ کے جسم کو متاثر کرنے سے کسی بھی انفیکشن کو روکتا ہے۔

ڈاکٹر گپتا نے تجویز دی کہ کورونا وائرس کے پھیلنے کے بعد ہر شخص کو کورونا وائرس سے ہونے والے انفیکشن سے بچنے کے لئے ماسک پہننا چاہیے کیونکہ ماسک صرف کووڈ۔19 کی وبا سے نہیں بلکہ تپ دق، نمونیا اور دیگر بہت سی بیماریوں سے بچاتا ہے۔ گھر سے باہر نکلنے پر ماسک سے منہ اور ناک کو ڈھانپنا نہ صرف وائرس اور بیکٹیریا جیسے کورونا، تپ دق اور نمونیا سے متعلق بیماریوں سے محفوظ رہ سکتا ہے، بلکہ الرجی، دمہ اور ہوا کی آلودگی سے ہونے والی تمام بیماریوں سے بھی محفوظ رہا جا سکتا ہے۔

UNI

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!