Published From Aurangabad & Buldhana

کسان آندولن کا آج تیسرا دن ، سبزی – پھلوں کے دام نے چھوا آسمان

نئی دہلی : مرکزی حکومت کی کھیتی سے وابستہ پالیسیوں کی مخالفت کررہے 8 ریاستوں کے کسان 10 دنوں کی ہڑتال پر ہیں۔ اتوار کو آندولن کا تیسرا دن ہے ۔ کسان اوکاش آندولن کا دہلی و این سی آر سمیت کئی ریاستوں پر اثر پڑنا شروع ہوگیا ہے۔ احتجاج کی وجہ سے دہلی اور اسے متصل ریاستوں میں دودھ ، سبزیاں اور پھلوں کے دام بڑھ رہے ہیں ، جس سے سبزی فروشوں اور سبزی کے خریداروں دونوں کو پریشانی ہورہی ہے۔

آنے والے دنوں میں سبزیوں اور پھلوں کے دام مزید بڑھنے کا امکان ہے۔ کسان اوکاش آندولن کے دوسرے دن ہفتہ کو مدھیہ پردیش میں 9 کیس درج ہوئے اور 16 کسانوں کو گرفتار کیا گیا ۔

مودی حکومت کے خلاف احتجاج کررہے کسانوں نے سبزیوں ، پھلوں ، دودھ سمیت ضروری چیزوں کی سپلائی بند کردی ہے، جس کی وجہ سے بازار میں اشیا کافی کم مقدار میں پہنچ رہی ہیں۔ سپلائی کم ہے اور دیمانڈ زیادہ ، ایسے میں پھلوں اور سبزیوں کے دام میں اضافہ لازمی ہے۔ ہفتہ کو احتجاج کے دوران کئی علاقوں میں کسانوں نے سڑکوں پر دودھ بہادیا ، سبزیوں اور پھلوں کو ٹرکوں سے کچل دیا۔

کسانوں کا مطالبہ ہے کہ ان کا قرض معاف کیا جائے اور سوامی ناتھن کمیشن کی سفارشوں کو نافذ کیا جائے، تبھی وہ ہڑتال ختم کریں گے ۔ کسانوں کی ہڑتال کا اثر روزمردہ کی اشیائے ضروریہ پر بھی پڑرہا ہے ۔ احتجاج کے پہلے دن جمعہ کو ہی کئی شہروں میں سبزیوں اور پھلوں کے دام موجودہ نرخ سے 10-20 روپے تک بڑھ گئے ۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!