Published From Aurangabad & Buldhana

وقت سے پہلے ناقابل افسران کے تبادلےکریں گے پولس کمشنر

اورنگ آباد:- شہر کے پولس کمشنر یشسوی یادو نے کم اہل پولس انسپیکٹرس و معاون کمشنر س کی فہرست ان کے تبادلوں کے لئے تیار کرلی ہے۔
پولس کمشنر کی جانب سے یہ قدم تب اٹھایا گیا ہے جب عمومی تبادلوں کے لئے درخواستوں کو جانچنا جاری ہے۔
ناقابل افسران کی فہرست میں کتنے نام ہیں یہ ابھی پتہ نہیں چلا ہے لیکن ذرائع کے مطابق معاون انسپیکٹرس اور نائب انسپیکٹرس کو ملانے کے بعد فہرست لمبی ہوسکتی ہے۔ جب اس سے متعلق پولس کمشنر یادو سے پوچھا گیا تو انھوں نے اسکی تصدیق کی ہے۔
میڈیا کو کمشنرنے بتایا کہ “ مختلف معاملات میں افسران کی اہلیت کو دیکھتے ہوئے ہم نے کاموں کی مناسب تکمیل کرنے والے اور نا کرنے والوں افسران کی فہرست تیار کی ہے۔ کاموں کی تکمیل نہ کرنے والوں میں انکی معیاد کا خیال نہ رکھتے ہوئے ہم نے رپورٹ ڈائریکٹر جنرل کے آفس بھیج رہے ہیں اور انکے تبادلہ کی بھی درخواست کریں گے۔”
قائدے کے مطابق کوئی بھی پولس انسپیکٹر یا معاون پولس کمشنر ایک پولس کمشنریٹ، ضلع یا خصوصی یونٹ میں دو یا تین سال تک اور چھ سال سے زائد ذمہ داری نہیں سنبھال سکتے ہیں۔
اس معیاد کے اختتام پر ان افسران کو معیاد پوری ہونے کی اطلاع دیتے ہوئے تبادلہ کی درخواست دینی ہوتی ہے۔ لیکن قوائد سے ہٹ کر کمشنر یادو نے نا اہل افسران کی فہرست تیار کی ہے جو کہ DG آفس کو تبادلہ کے لئے روانہ کی جائیگی۔
ساتھ ہی کمشنر یادو نے یہ بھی کہا ہیکہ وہ اہل و قابل افسران کو اپنے جگہ پر روکنے کی پوری کوشش کریں گے جو ذاتی وجوہات کی بنا پر تبادلہ چاہتے ہیں۔ کمشنر یادو کا یہ قدم اورنگ آباد کی تاریخ میں پہلی بار ہوا ہے جس تمام افسران حیران ہے۔
ریاستی پولس ڈپارٹمنٹ نے تمام عمومی تبادلوں کے لئے آخری تاریخ 30 اپریل طئے کی ہے۔
اس عمل کے لیے تمام ہی ضلع کے پولس چیف کو معیاد ختم ہونے کے حساب سے اور وہ جو خود وقت سے پہلے تبادلہ چاہتے ہیں اور وہ جن کو نظم و ضبط کی بنیاد پر پر کاروائی کرنا ہے انکی فہرست تیار کر روانہ کرنے کی ہدایات دے دی گئی ہیں۔
ایک اعلیٰ پولس افسر نے میڈیا کو بتایا کہ سیاسی تعلقات رہنے کی وجہ سےتقریباً پوری ریاست میں نا اہل پولس افسران کا مسئلہ موجود ہے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!