Published From Aurangabad & Buldhana

ورچوئل ریئلیٹی: انسانی دماغ کو دھوکہ دینے والی تخیلات کی دُنیا

یہ تصور کچھ نیا نہیں اور کم و بیش گذشتہ 100 سالوں سے ایسی ٹکنالوجی پر کام کیا جارہا ہے جس کی مدد سے انسانی دماغ کو دھوکہ دیا جاسکے اور نقل کو اصل کے طور پر پیش کیا جائے۔

گذشتہ 100 سالوں سے ایسی ٹکنالوجی پر کام کیا جارہا ہے جس کی مدد سے انسانی دماغ کو دھوکہ دیا جاسکے اور نقل کو اصل کے طور پر پیش کیا جائے۔

شاید آپ نے کبھی اخبارات، ٹی وی یا انٹرنیٹ پر ورچوئل ریئلیٹی کا لفظ سنا ہو؟ آسان الفاظ میں اسے کچھ یوں بیان کیا جاسکتا ہے کہ کمپیوٹر اور دیگر الیکٹرانک آلات کی مدد سے ایک ایسا ماحول پیدا کیا جائے جو دیکھنے اور محسوس کرنے میں بالکل اصل معلوم ہو۔ چاہے حقیقت میں اس کاوجود ہی نہ ہو۔

یہ تصور کچھ نیا نہیں اور کم و بیش گذشتہ 100 سالوں سے ایسی ٹکنالوجی پر کام کیا جارہا ہے جس کی مدد سے انسانی دماغ کو دھوکہ دیا جاسکے اور نقل کو اصل کے طور پر پیش کیا جائے۔دو سال قبل متعارف کروائے جانے والا ورچوئل ریئلیٹی ہیڈ سیٹ رفٹ (Rift) بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔ اس ڈیوائس کو سر پر پہنا جاتا ہے اور یہ آپکی آنکھوں کے سامنے ایک پردہ ڈال دیتی ہے۔ دیکھنے میں کافی عجیب سی ہے لیکن جب اس پر گیم یا کوئی ورچوئل سین چلتا ہے تو آپ اپنے آپکو اسی دنیا کا حصہ محسوس کرنے لگتے ہیں۔ اس میں لگے سنسرز آپ کے سر کی حرکت کو مانیٹر کرتے رہتے ہیں، جس کی مدد سے آپ کو شبہ تک نہیں ہوتا کہ آپ کی آنکھوں کے سامنے نظر آنے والا منظر دراصل ایک دھوکہ ہے۔

رفٹ کو پہننا اور پہنے رکھنا بہت ہی آسان ہے، کم وزن ہونے کے باعث آپ اس پر گھنٹوں کوئی گیم کھیل سکتے ہیں۔ اسی طرح عام اسکرین کی نسبت اس میں دیکھنے کی حد پر کوئی قید نہیں ہے۔ آپ جتنا دور دیکھنا چاہیں یا جیسے مرضی گردن گھمائیں بالکل عام زندگی کی طرح چاروں طرف وہی منظر نظر آئے گا۔ اس ڈیوائس کے تخلیق کار Palmer Luckey نے محض 19 سال کی عمر میں اسکا ایک پروٹوٹائپ تیار کیا ۔ جسے شہرت یافتہ گیمز Doom اور Quake کے پروگرامر Carmack John نے کافی پسند کیا۔ اس کے بعد گیم انڈسٹری کے ماہرین کی معاونت سے پالمر نے کراؤ فنڈنگ ویب سائٹ کک ا سٹارٹر پر 2 لاکھ 50 ہزار امریکی ڈالر کے فنڈ کی اپیل کی اور حیران کن طور پر اس کی معیاد ختم ہونے سے قبل ہی لوگوں نے اصل رقم کا دس گنا یعنی کم و بیش 25 لاکھ امریکی ڈالر عطیہ کیے۔

حیرت انگیز بات یہ ہے کہ عام صارفین کے لیے پروڈکٹ متعارف کروانے سے قبل ہی فیس بک نے اس کمپنی کو 2 بلین امریکی ڈالر میں خرید لیا ہے۔ اب تک ریف کے چار مختلف ورژن متعارف کروائے جاچکے ہیں۔ عام صارفین آسانی سے یہ ڈیوائسیز خرید سکتے ہیں۔

ہیڈ سیٹ پر کوئی گیم کھیلنے کے لیے آپ کو اس کے کنٹرول باکس کو اپنے کمپیوٹر کے ساتھ منسلک کرنا ہوتا ہے۔ کمپنی ذرائع کے مطابق جلد یہ ہیڈ سیٹ موبائل فونز کے لیے بھی کام کرے گا۔ اوکیولس رفٹ پر کھیلے جانے والے گیمز کی پروگرامنگ تھوڑی مختلف ہوتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ابھی اس پر دستیاب گیمز کی تعداد بہت کم ہے۔ لیکن خیال کیا جارہا ہے کہ اس ڈیوائس کے گیمز کی تعداد میں بھی اضافہ ہوگا۔ ابھی آپ اس پر 2 Fortress Team اور BioShock جیسے مشہور گیمز کھیل سکتے ہیں۔

سیم سنگ نے اپنے فون گلیکسی نوٹ-4 کے ساتھ Gear VR نامی ایک ڈیوائس بھی متعارف کروائی ہے۔ رفٹ کے مقابلے اسے کمپیوٹر کے ساتھ جوڑنے کی ضرورت نہیں اور اس کے لئے گلیکسی نوٹ 4 کا استعمال بھی کیا جا سکتا ہے۔ فون بیک وقت ا سکرین کا کام بھی دے گا اور کمپیوٹر کا بھی۔ صارفین اس کے ذریعے گیمز، فلمیں اور تصاویر کو ایک بالکل نئے اور اچھوتے انداز میں دیکھ سکتے ہیں۔ اس ڈیوائس کی قیمت 200 امریکی ڈالر مقرر کی گئی ہے تاہم گلیکسی نوٹ 4 کی قیمت الگ سے ادا کرنی ہوگی۔ گو کہ ورچوئل ریئلیٹی کی یہ ڈیوائسیز ابھی کافی مہنگی ہیں لیکن وقت گذرنے کے ساتھ ساتھ ان کی قیمتوں میں کافی حد تک کمی آئے گی۔

گوگل نے تو ایسی ڈیوائسیز محض 2500 روپئے میں متعارف کروا دی ہے جس میں اسمارٹ فون استعمال ہوتا ہے۔ تاہم یہ ڈیوائس گتے کی بنی ہے اور آپ اس پر صرف گوگل ارتھ اور یوٹیوب ہی دیکھ سکتے ہیں۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!