Published From Aurangabad & Buldhana

ناندیڑ: اجتماعی عصمت دری معاملہ میں 2کو عمر قید

ناندیڑ:۔ ضلع و سیشن عدالت کے جج اے۔ جی۔ موہابے نے 2013میں 31سالہ خاتون کے ساتھ ہوئی عصمت دری معاملے میں 2
لوگوں کو عمر قید کی سزا دی ہے اور 2دیگرکو ضروری ثبوت نہ ہونے پر باعزت بری کردیا ہے۔
پولس نے ملزمین کے خلاف 25؍جنوری 2013کو کیس درج کیا تھا۔ عدالت نے ساتھ ہی مجرمین پر 52,000روپئے کا جرمانہ بھی لگایا ہے اور مظلوم کو 50,000روپئے ادا کرنے کا حکم دیا ہے۔

فریادی کے وکیل لٹکھارے نے کہا کہ 25؍ جنوری 2013کو یہ خاتون ناندیڑ کے بیرون میں واقع اپنے گھر میں اپنی 10سالہ بیٹی اور 12سالہ بیٹے کے ساتھ سو رہی تھی تب اس نے دیکھا کہ کوئی کھڑکی سے اس کے گھر میں جھانک رہاہے۔ یہ کچھ آدھی رات کا وقت تھا۔جب اس نے پوچھا کے وہ کون ہے تو آدمی نے جواب دیا تھا کہ وہ پنکج ہے اور وہ دونوں ایک دن قبل اسکے پڑوسی کے گھر ملے تھے۔پنکج نے پھر اس سے دروازہ کھولنے کو کہا۔ جب اس نے منع کردیا تو اس نے دروازہ توڑکر اندر آنے کی دھمکی دی۔ اس نے تب دروازہ کھول دیا جس کے بعد پنکج نے اس کے بال پکڑ کر اسے سڑک پر گھسیٹا۔وہاں پر ایک اور آدمی تھا جس نے اس خاتون کو وہاں سے لے جانے میں پنکج کی مدد کی۔جب پنکج مظلوم خاتون کو جنسی تکلیف پہنچا رہا تھا تب دوسرے نے اور دو لوگوں کو بلایا ۔ جس کے بعد چاروں نے اس کی عصمت دری کی۔
وکیل نے کہا کہ اس خاتون نے اس موقع پر ان سے گزارش کی کہ وہ ایسا نہ کرے اور اسے چھوڑ دے۔لیکن انھوں نے اس کی بات نہیں مانی۔

اگلے دن خاتون نے ناندیڑ کے ائیرپورٹ پولس تھانہ میں شکایت درج کروائی۔
شروع میں نائب SPنے اس معاملے کی جانچ کی اورپنکج کو ملا کر چار لوگوں کو گرفتار کیا۔جس کے بعد جانچ کی تکمیل پولس انسپیکٹر دھرم سنگھ چوہان نے کی اور عدالت میں چارج شیٹ داخل کی۔

جس کے بعد مقدمہ کی مکمل سماعت کے بعد عدالت نے پنکج سریش دابھاڑے (عمر24) اور شیخ رسول عامر (عمر25) کو عمر قید کی سزا سنائی اور باقی دو سنجئے ماروتی گھورپڑے(عمر20) اورنتن سنگرام پائیکراؤ (عمر20) کو باعزت بری کردیا۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!