Published From Aurangabad & Buldhana

موہن بھاگوت نے’عالمی ہندو کانگریس’ میں کہا "ہندوہزاروں سال سے ہورہے ہیں پریشان”۔

بھاگوت نے ہندو طبقے سے متحد ہوکرانسانی فلاح وبہبود کے لئے کام کرنے کی اپیل کی ہے۔

راشٹریہ سیوم سیوک سنگھ (آرایس ایس) کے چیئرمین موہن بھاگوت نے جمعہ کو ہندو طبقے سے متحد ہوکرانسانی فلاح و بہبود کے لئے کام کرنے کی اپیل کی ہے۔ امریکہ کے شکاگو میں وشو ہندو سمیلن میں تقریباً 2500 لوگوں کو خطاب کرتے ہوئے بھاگوت نے کہا کہ ہندو سماج میں باصلاحیت (ٹیلنٹیڈ) لوگوں کی تعداد سب سے زیادہ ہے۔

ہندو نظریات سے ترغیب لینے والے اپنے خطاب میں موہن بھاگوت نے کہا "لیکن وہ کبھی ساتھ نہیں آتے ہیں۔ ہندووں کا ساتھ آنا اپنے آپ میں مشکل ہے”۔ انہوں نے کہا کہ ہندو ہزاروں سالوں سے پریشان ہورہے ہیں۔ کیونکہ وہ اپنے بنیادی اصولوں پرعمل کرنا اور روحانیت کو بھول گئے ہیں۔

سبھی لوگوں کے ساتھ آنے پر زور دیتے ہوئے بھاگوت نے کہا "ہمیں ساتھ آنا ہوگا”۔ انہوں نے جمعہ کو کہا کہ ہندو کسی کی مخالفت کرنے کے لئے نہیں جیتے ہیں، لیکن کچھ لوگ بھی ہوسکتے ہیں جو ہندووں کی مخالفت کرتے ہیں۔ آرایس ایس سربراہ نے ہندو طبقے سے متحد ہوکر انسانی حقوق کے لئے کام کرنے کی اپیل بھی کی۔

شکاگو میں منعقدہ عالمی مذاہب اجلاس میں سوامی وویکا نند کے 11 ستمبر 1893 کو کئے گئے تقریر کے 125 سال پورے ہونے پر عالمی ہندو کانگریس کا انعقاد کیا گیا ہے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!