Published From Aurangabad & Buldhana

ملک میں 1977 جیسی صورتحال، بی جے پی مخالف سیاسی پارٹیوں کو متحد ہونے کی ضرورت: شرد پوار کا فارمولہ

ممبئی: نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) کے سربراہ شرد پوار نے پیر کو کہا کہ حالیہ ضمنی انتخابات میں بی جے پی کی خراب کارکردگی کوئی چھوٹی بات نہیں ہے۔ انہوں نے بھگوا پارٹی کے خلاف اپوزیشن سے ایک اسٹیج پر آنے کی اپیل کی اور کہا کہ وہ اس میں اتحاد کے لئے اہم کردار ادا کرنے کے لئے تیار ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ملک میں 1977 جیسی صورتحال ہے، جب اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد نے اندرا گاندھی کو اقتدار سے بے دخل کردیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ زیادہ تر ضمنی انتخابات کے نتائج برسراقتدار جماعت (بی جے پی) کے خلاف گئے۔ یہ کوئی چھوٹی بات نہیں ہے۔ شرد پوار نے یہ باتیں بھنڈارا گوندیا سے اپنی پارٹی کے نو منتخب ممبرپارلیمنٹ مدھوکر ککڑے سے ملاقات کے بعد کہی۔

شرد پوار نے کہا نامہ نگاروں سے کہا کہ ماضی میں ایسے مواقع رہے ہیں جب ضمنی انتخابات میں ملی شکست کا نتیجہ اس وقت کی موجودہ حکومتوں کی شکست کے طور پر سمجھا گیا۔ انہوں نے 1977 کو بھی یاد کیاجب اپوزیشن اتحاد کی وجہ سے اندرا گاندھی کی قیادت والی کانگریس حکومت کو شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ آج بھی اسی طرح کے حالات بن رہے ہیں۔

سابق مرکزی وزیر نے کہا کہ جمہوریت میں اعتماد کرنے والے اور اور مشترکہ پروگرام رکھنے والے بی جے پی مخالفت پارٹیوں کو لوگوں کی امیدوں کو دھیان میں رکھنا چاہئے اور ایک اسٹیج پر آگے آنا چاہئے۔

شرد پوار نے کہا کہ ریاستوں میں مضبوط موجودگی رکھنے والی پارٹیوں (جیسے کی کیرل میں کمیونسٹ، کرناٹک میں جے ڈی ایس، گجرات، کرناٹک، مدھیہ پردیش، پنجاب، راجستھان اور مہاراشٹر میں کانگریس، آندھرا پردیش میں ٹی ڈی پی، تلنگانہ میں ٹی آرایس، مغربی بنگال میں ترنمول کانگریس اور مہاراشٹر میں این سی پی) کو ایک عام اتفاق رائے بنانے کی ضرورت ہے۔ گزشتہ ہفتہ اپوزیشن جماعتیں لوک سبھا اور اسمبلی انتخابات میں 14 میں سے 11 پر فاتح بن کر ابھری تھیں اور برسراقتدار جماعت اس کی معاون پارٹیاں تین سیٹوں تک سمٹ گئی تھیں۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!