Published From Aurangabad & Buldhana

معصوموں سے ریپ پر پھانسی،10پوائنٹس میں جا نیں کیا ہے پوکسو ایکٹ؟

نا بالغون سے ریپ کی بڑھتے واقعات کے مد نظر حکومت نے پروٹیکشن آف چلڈرن فارم سیکسوئل آفینس ایکٹ (پوکسو)میں بڑی تبدیلی کی ہے۔پوکسو ایکٹ میں تبدیلی کی پیشکش کو منظوری ملنے کے بعد اب 12 سال کی کم عمر کی بچیوں سے ریپ کے معاملوں میں موت کی سزا ہوگی۔ملک بھر میں گشزشتہ کچھ وقت سے اس کیلئے سخت قانون بنانے کی مانگ کی جا رہی تھی۔

آئے جانتے ہیںآخرکیا ہے پوکسو ایکٹ؟

پوکسو ایکت میں کیا تبدیلی کی گئی ہے؟

اب 12 سال سے کم عمر کی بچیوں سے ریپ کے معاملوںمیں موت کی سزا ہوگی۔

۔16 سال سے کم عمر کیلڑکی سے ریپ کرنے پر کم سے کم سزا کو 10 سال سے بڑھاکر 20 سال کیا گیا ہے۔

کیا ہے پوکسو ایکٹ؟یہ ہے ایکٹ سے متعلق 10 بڑی باتیں۔۔۔

۔18 سال سے کم عمر کے بچوں سے کسی بھی طرح کا سیکسئل برتاؤ اس قانون کے دائرے میں آتا ہے۔یہ قانون لڑکے اور لڑکی کو سماجی طور پر سکیورٹی دیاتا ہے۔

اس ایکٹ کے تحت بچوں کو جنسی ہراسانی ،سیکسوئل اٹالٹ اور پونو گرافی جیسے جرائم سے پروٹیکٹ کیا گیا ہے۔

۔2012 میں بنے اس قانون کے تحت الگ۔الگ جرائم کیلئے الگ۔،الگ سزا طے کی گئی ہیں۔

پوکسو قانون کے تحت سبھی جرائم کی سنوائی ایک خصوصی عدالت کے ذریعے کیمرے کے سامنے یا جن پر بچہ بھروسہ کرتا ہے ان کی موجودگی میں سماعت کی تجویز ہے۔

اگر کوئی شخص کسی بچے کے جسم کے کسی بھی حصے میں پرائیویٹ پارٹ ڈالتا ہے تو یہ سیکشن ۔3 کے تحت جرم ہے۔اس کیلئے دفعہ ۔4 میں سزا طے کی گئی ہے۔

اگر مجرم نے کچھ ایس جرم کیا ہے جو کہ چائلڈ کرائم قانون کے علاوہ کسی دوسرے قانون میں بھی جرم ہے۔تو مجرم کو سزا اس قانون کے تحت ہو گی جو کہ سب سے سخت ہو۔

اگر کوئی شخص کسی بچے کے پرئیویٹ حصے کو چھوتا ہے یا اپنے پرائیویٹ حصے کو بچے سے ٹچ کراتا ہے تو دفع ۔8 کے تحت سزا ہوگی۔

اگر کوئی شخص غلط نیت سے بچوں کے سامنے جنسی حرکتیں کرتا ہے یا سے ایسا کرنے

کو کہتا ہے ،پونو گرافی دکھاتا ہے تو تین سال سے للیکر عمر قید تک کی سزا ہو سکتی ہے۔

اس ایکٹ میں یہ پیشکش ہے کہ اگر کوئی شخص یہ جانات ہے کی کسی بچے کا جنسی استحصال ہوا ہے تو اس کی رپورٹ نزدیکی تھانے میں دینی چاہئے۔اگر وہ ایسا نہیں کرتا ہے تو اسے6 مہینے کی سزا ہوگی۔

ایکٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ بچے کے جنسی استحسال کا معاملہ واقعہ پیش آنے کی تاریخ سے ایک سال کے اندر نبٹایا جانا چاہئے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!