Published From Aurangabad & Buldhana

مسلمانوں کے خلاف نفرت پھیلانے کی اجازت نہیں دی جا سکتی، سدرشن کے پروگرام پر سپریم کورٹ کی روک

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے سدرشن چینل کے ’بنداس بول‘ نامی اس متنازعہ ٹی وی پروگرام پر منگل کے روز پابندی عائد کر دی ہے، جس میں انہوں نے نوکرشاہی جہاد کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسلمان سول سروسز میں دراندازی کر کے ملازمتیں حاصل کر رہے ہیں۔ سپریم کورٹ نے سدرشن کے وکیل سے کہا کہ آپ کے موکل ملک کا نقصان کر رہے ہیں، نیز ایک ایسا نظام قائم کیا جانا چاہیے جس نفرت پھیلانے والے مباحثوں و پروگراموں پر روک لگائی سکے۔

واضح رہے کہ سدرشن چینل ٹی وی پروگرام کے اشتہار میں دعوی کیا جا رہا ہے کہ سول سروسز میں مسلم طبقہ دراندازی کر رہا ہے۔ سدرشن کے اس ٹی وی پروگرام پر ہائی کورٹ کی طرف سے پہلے ہی پابندی عائد کی جا چکی ہے۔ سدرشن چینل کے مالک سریش چوہان نے ہائی کورٹ کے فیصلے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے چیلنج کرنے کی بات کی تھی۔

عدالت عظمیٰ نے پروگرام کے خلاف دائر ایک عرضی پر سماعت کے دوران کہا تھا کہ کچھ میڈیا ہاؤسوں کے پروگراموں میں ہونے والے مباحثے تشویش کا باعث ہیں کیوں کہ اس میں ہر طرح کی منافرت بھری باتیں کی جاتی ہیں۔ جسٹس ڈی وائی چندرچوڈ، جسٹس اندو ملہوترا اور جسٹس کے ایم جوزف کی بنچ نے کہا، ’’اس معاملے میں بادی النظر عدالت یہ سمجھتی ہے کہ اس پروگرام کا مقصد اور ارادہ یہ ثابت کرنا ہے کہ مسلم برادری کی طرف سے یو پی ایس سی کے امتحان میں کامیابی حاصل کرنا ایک سازش کا حصہ ہے۔‘‘

عدالت عظمیٰ نے کہا، ’’پروگرام یہ کہتا ہے کہ مسلمانوں نے سول سروسز میں دراندازی کر لی ہے اور حقائق کے بغیر ہی یو پی ایس سی کے امتحانات کو شکوک و شبہات کے گھیرے میں لے آتا ہے۔‘‘ وہیں، سالیسٹر جنرل تشار مہتا نے بنچ سے کہا کہ صحافیوں کی آزادی بالاتر ہے اور پریس کو قابو میں کرنا کسی بھی جمہوری نظام کے لئے نقصاندہ ہے۔‘‘

سدرشن ٹی وی کی طرف سے پیش ہونے والے ایڈوکیٹ شیام دیوان نے بنچ سے کہا کہ چینل اسے قومی مفاد میں ایک کھوجی خبر مانتا ہے۔ اس پر بنچ نے کہا، ’’آپ کا موکل ملک کو نقصان پہنچا رہا ہے اور یہ اعتراف نہیں کرتا کہ ہندوستان کثیر جہتی ثقافت والا ملک ہے۔ آپ کے موکل کو اپنی آزادی کے حق کا استعمال احتیاط سے کرنا چاہیے۔‘‘

خیال رہے کہ سدرشن ٹی وی کے متنازع پروگرام کو نشر نہیں کرنے پر ہائی کورٹ نے فیصلہ لینے کا اختیار مرکزی حکومت کو دیا تھا اور اس کے بعد مرکز نے اسے نشر کرنے کی اجازت فراہم کر دی تھی۔ سپریم کورٹ نے اس 49 سیکنڈ کا پرومو دیکھنے کے بعد ٹی وی شو پر پابندی عائد کرنے کا حکم سنا دیا اور چینل سے کہا کہ شو کی جو قسط منگل کے روز نشر کی جانے والی ہے اسے روک دیا جائے۔

قومي آواز بيورو

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!