Published From Aurangabad & Buldhana

عدم اعتماد کی تحریک لائیو : بحث شروع ہونے سے پہلے ہی بی جے ڈی نے کیا واک آوٹ

آج لوک سبھا میں مرکزی حکومت کے خلاف اپوزیشن پارٹیوں کے ذریعہ لائی گئی عدم اعتماد کی تحریک پر بحث اور ووٹنگ ہوگی ۔

آج لوک سبھا میں مرکزی حکومت کے خلاف اپوزیشن پارٹیوں کے ذریعہ لائی گئی عدم اعتماد کی تحریک پر بحث شروع ہوگئی ہے اور شام چھ بجے اس پر ووٹنگ ہوگی ۔ وزیر اعظم مودی نے آج صبح اس سلسلہ میں ایک ٹویٹ بھی کیا ۔ وزیر اعظم نے ٹویٹ میں لکھا کہ آج ہماری پارلیمانی جمہوریت کا ایک اہم دن ہے ۔ حکومت کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کرنے والی ٹی ڈی پی آج لوک سبھا میں اس پر بحث کی شروعات کرے گی ۔ لوک سبھا اسپیکر سمترا مہاجن نے بولنے کیلئے پارٹی کو 13 منٹ کا وقت دیا ہے ۔ پارٹی کی جانب سے جے دیو گللا پہلے مقرر ہوں گے ۔ اہم پوزیشن پارٹی کانگریس کو بحث کیلئے 38 منٹ کا وقت دیا گیا ہے ۔ عدم اعتماد کی تحریک سے وابستہ ہر اپ ڈیٹ کیلئے نیوز 18 اردو سے جڑے رہیں۔

11:55 am (IST)
عدم اعتماد کی تحریک سے متعلق ایک سوال پر نتیش کمار نے کہا کہ ہم لوگ حکومت کے ساتھ ہیں ۔

11:29 am (IST)

11:27 am (IST)
شیو سینا کی میٹنگ ختم ہوگئی ہے ، شیو سینا نے بھی فیصلہ کیا ہے وہ عدم اعتماد کی تحریک کا بائیکاٹ کرے گی ۔

11:14 am (IST)

11:13 am (IST)
شیو سینا نے بھی اعلان کیا ہے وہ عدم اعتماد کی تحریک کا بائیکاٹ کرے گی ۔

11:10 am (IST)
عدم اعتماد کی تحریک پر بحث شروع ہونے سے پہلے ہی بی جے ڈی نے واک آوٹ کردیا ہے ۔

10:59 am (IST)
اے آئی ڈی ایم کے کو 29 منٹ، ترنمول کانگریس کو 27 منٹ، بیجو جنتا دل کے لیے 15 منٹ، شیوسینا کو 14 منٹ، تلگودیشم پارٹی کو 13 منٹ، تلنگانہ راشٹر سمیتی کو 9 منٹ، مارکسی کمیونسٹ پارٹی کو سات منٹ، نیشنلسٹ کانگریس پارٹی اور سماج وادی پارٹی کو چھ- چھ منٹ اور لوک جن شکتی پارٹی کو پانچ منٹ کا وقت دیا گیا ہے۔

10:58 am (IST)
سب سے بڑی پارٹی ہونے کے ناطے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کو سب سے زیادہ تین گھنٹے 33 منٹ دیئے گئے ہیں۔

10:58 am (IST)
پارلیمنٹ میں مودی حکومت کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کرنے والی تلگودیشم پارٹی کو بحث کیلئے صرف 13 منٹ اور اہم اپوزیشن کانگریس کو 38 منٹ کا وقت ملا ہے۔

10:57 am (IST)
جہاں تک مجھے معلوم ہے نہ تو کبھی پارٹی نے مجھے بیچ میں چھوڑا ہے اور نہ ہی میں نے پارٹی کو ۔ میں ایک وفادار لڑاکے کی طرح بی جے پی کی حمایت کرتا تھا ، کرتا ہوں اور کرتا رہوں گا ۔

As far as I’m concerned,so long the party has nt left me in the lurch,nor hve I left the party,though maybe high time & right time,I should,could & would support BJP as a loyal & true soldier. For the time being my vote is here, rest for 2019 elections….”Yeh kahani phir kabhi”.

— Shatrughan Sinha (@ShatruganSinha) July 20, 2018

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!