Published From Aurangabad & Buldhana

عام بجٹ 2018 : ارون جیٹلی نے تعلیم کو لے کر کئے کئی بڑے اعلانات ، معیار میں بہتری پر زور

نئی دہلی : مرکزی وزیر ارون جیٹلی نے بجٹ میں تعلیم کو لے کرکئی اعلانات کئے ۔ وزیر خزانہ نے بجٹ تقریر کے دوران کہا کہ 2022 تک ایجوکیشن سسٹم کو سدھارنے کیلئے ایک لاکھ کروڑ روپے خرچ کئے جائیں گے ۔ ساتھ ہی ساتھ حکومت کئی نئی اسکیمیں بھی لانچ کرنے کی تیاری میں ہے ۔

قبائلی علاقوں میں ایک لوویہ اسکول کھولے جائیں گے اور نو ودیہ ودیالیہ جیسا نظام ہوگا ۔ ان اقدامات کے اعلان کے بعد اب مانا جارہا ہے کہ ان علاقوں میں تعمیر کی سطح میں بہتری آئے گی ۔

بجٹ میں ہوئے اعلانات :۔

اگلے چار سالوں میں اسکولوں کے انفرا اسٹرکچر پر ایک لاکھ کروڑ روپے خرچ کئے جائیں گے ۔

ایس ٹی طلبہ کیلئے ایک لوویہ اسکول کھولے جائیں گے ۔

پری نرسری سے بارہویں تک کے تعلیمی نظام میں بہتری لائی جائے گی۔

پلاننگ اینڈ آرکیٹکٹ کیلئے دو نئے اسکول کھولے جائیں گے ۔

بی ٹیک طلبہ کیلئے پی ایم ریسرچ فیلو پلان لانچ ، ہر سال ایک ہزار طلبہ کو فائدہ ملے گا ۔

موجودہ صورتحال

گزشتہ سال کے بجٹ میں حکومت نے تعلیم کے شعبہ کیلئے فنڈ میں اضافہ کیا اور کل بجٹ کا 9.9 فیصدی حصہ اس سیکٹر کیلئے طے کیا ۔ اس کے باوجود اس سیکٹر کی تصویر کچھ اچھی نہیں ہے ۔ گزشتہ دہائی میں اس سیکٹر کو الاٹ ہوئی رقم کل خرچ کی 5.5.4 فیصدی کے آس پاس رہی ۔ گزشتہ سال یہ نمبر 3.7 فیصدی تھا ۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!