Published From Aurangabad & Buldhana

شہر میں کانگریس کا معلنہ بھارت بندجزوی کامیاب

جگہ جگہ احتجاجی مظاہرے‘ اسکول بس و آٹو سروس بندرہی،احتیاطاً اسکولی بچوں کو وقت سے قبل چھوڑا گیا

اورنگ آباد: ۱۰؍ ستمبر( م خ )پٹرول ڈیزل کی بڑھتی قیمتوں اور مہنگائی کے خلاف آج کانگریس سمیت ۲۱ ؍اپوزیشن پارٹیوں کاملک گیربند تھا۔ لیکن شہرمیں معمولات زندگی حسب معمول جاری رہے جس کے سبب اس بھارت بند کاشہرپرکچھ خاص اثردیکھنے کونہیں ملا۔گزشتہ چارسالوں سے مرکزی اقتدارمیں تبدیلی اور بی جے پی حکومت کے دورمیں پٹرول ڈیزل کے داموں میں مسلسل اضافہ درج کیاجارہاہے جس کے سبب مہنگائی بھی آسمان چھورہی ہے۔ عوام الناس کاجینا دو بھر ہوچکا ہے۔ چارسال قبل گھریلو گیس سلینڈر جو ساڑھے تین سوتا چارسوروپئے کاملتاتھااس کی قیمت آج بڑھ کر ساڑھے سات سوتا آٹھ سوروپئے کے قریب پہنچ چکی ہے ۔ ریلوے پلیٹ فارم ٹکٹ وٹکٹ میں اضافہ ہوچکا ہے۔ اشیائے مایحتاج کی قیمتوں میں لگاتار اضافہ درج کیاجارہاہے۔نوٹ بندی اورجی ایس ٹی کے سبب عوام الناس کی زندگی اجیرن ہوچکی ہے ۔وزیراعظم کے نوٹ بندی کے فیصلے کے سبب ملک کی معیشت ڈانوڈول ہوچکی ہے ۔بی جے پی کو اقتدارکانشہ ہوچکاہے۔انانیت غرور و تکبرکے سبب وہ عوام الناس کوخاطرمیں نہیں لارہے ہیں۔اس اناپرست و مغرور و متکبر بی جے پی حکومت کو خواب غفلت سے بیدارکرنے کیلئے آج کانگریس اوردیگر ۲۱؍ اپوزیشن پارٹیوں کی جانب سے ملک گیر بند کااعلان کیاگیاتھا۔جس کے تحت آج شہرمیں مختلف مقامات پرکانگریس ودیگرپارٹیوں کی جانب سے احتجاجی مظاہرہ‘ دھرناآندولن کیے گئے۔جس میں مکندواڑی پر پٹرول پمپ کے سامنے بیل گاڑی دوڑاکر پٹرول ڈیزل کی مسلسل بڑھتی قیمتوں پراحتجاج کیاگیا،اوربی جے پی حکومت کی مذمت کی گئی۔اس موقع پرکارکنان نے مودی سرکار ہائے ہائے‘ سستی دارو مہنگا تیل واہ رے مودی تیراکھیل‘مودی سرکاربہری سرکار ‘مودی سرکار ہوش میں آؤ‘ و دیگر نعرے لگائے ۔اس احتجاج کو بیوپاریوں کاتعاون حاصل ہوا جنہو ں نے اپنی دکانیں بندرکھ کر اس احتجاج میں شرکت کی۔

ایم این ایس کارکنان کی مودی کے ساتھ سیلفی
ایم این ایس کی جانب سے مہنگائی و ایندھن کے بڑھتے داموں کے خلاف آج کرانتی چوک پر پرزوراحتجاجی مظاہرہ کیاگیا۔ انوکھے طرزکے اس مظاہرہ میں وزیراعظم نریندر دامودر داس مودی کے پورٹریٹ کے ساتھ ورکرس نے سلیفی لے کر ان کی مذمت کی۔اس موقع پر ضلع صدر سمیت کھامبیکر‘ سات مان سنگھ گلاٹی‘ گوتم آمراؤ‘ وپن نائیک‘ امول کھڑسے‘ وشال اہیر‘ ودیگر موجودتھے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!