Published From Aurangabad & Buldhana

شام میں کیمیائی حملہ میں 100 سے زائد افراد ہلاک ، امریکہ اور روس آمنے سامنے

واشنگٹن/ماسکو: امریکہ نے شام میں کیمیاوی حملے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے روس سے کہا کہ وہ شام میں مزید بربریت اور کیمیاوی حملوں کو روکنے کے لئے شامی حکومت کی تائید سے دستبردار ہو جائے اور اقوام عالم کے ساتھ مل کر کام کرے۔ دوسری طرف روسی وزارت خارجہ نے مشرقی غوطہ کے علاقے دوما میں کیمیائی حملے کی رپورٹوں کو من گھڑت قرار دیا ہے۔ ایک روسی بیان میں یہاں تک کہا گیا ہے کہ ان اطلاعات کی بنا پر اگر شامی فورسز کے خلاف کوئی بھی عسکری کارروائی کی گئی، تو اس کے نہایت سنگین نتائج برآمد ہوں گے۔

محکمہ خارجہ کی ترجمان ہیدر ناورٹ کی طرف سے جاری امریکی اخباری بیان میں کہا گیا ہے کہ اسد حکومت اور اس کی تائید کرنے والوں کو ایسے حملوں کا ذمہ دار گردانا جائے اور اسے فوراً روکا جائے۔ روسی بیان میں کہا گیا ہےکہ ماسکو کی حکومت اس سے قبل بھی کئی بار خبر دار کر چکی ہے کہ من گھڑت افواہوں کی بنیاد پر اشتعال انگیز اقدامات کر کے دہشت گردوں کی مدد نہ کی جائے۔

ادھر غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق شامی فوج کے مشرقی علاقے غوطہ میں کیمیکل بم حملے کے نتیجے میں 100 سے زائد افراد ہلاک اور ایک ہزار سے زائد زخمی ہوگئے ہیں ۔ امدادی اہلکاروں کے مطابق حملے کے متاثرین میں زیادہ تعداد بچوں کی ہے۔ شام میں امدادی کاموں میں مصروف تنظیموں کے مطابق زخمیوں کو فوراً اسپتالوں میں منتقل کردیا گیا ہے جہاں ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے جب کہ متعدد افراد کا جسم مفلوج ہوچکا ہے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!