Published From Aurangabad & Buldhana

سپریم کورٹ کا سوامی کو دو ٹوک، پہلے مسجد پرآئے گا فیصلہ، پھرپوجا پرہوگاغور

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے بی جے پی لیڈرسبرامنیم سوامی سے بدھ کو کہا ہے کہ وہ اجودھیا کے متنازعہ مقامات پر پوجا کرنے کا حق دلانے کے مطالبہ کرنے والی اپنی عرضی کا ذکر، ’کیا مسجد اسلام کا اٹوٹ حصہ ہے‘ کے سوال پرسپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد کریں۔ عدالت عظمیٰ نے کہا کہ فیصلہ پہلے مسجد پرآئے گا، اس کے بعد پوجا کی اجازت پر غور کیاجائے گا۔

چیف جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والی خصوصی بنچ نے رام جنم بھومی – بابری مسجد تنازعہ کے مسلم فریق کی عرضی پر اپنا فیصلہ 20 جولائی کو محفوظ کرلیا تھا۔ عرضی میں مسلم فریق نے گزارش کی تھی کہ کورٹ، ’’مسجد اسلام کا اٹوٹ حصہ نہیں ہے۔‘‘ بتانے والے اپنے 1994 کے فیصلے کی بڑی بینچ سے ازسرنوغورکرائیں۔

چیف جسٹس کےعلاوہ جسٹس اے ایم کھانولکراورجسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی بینچ نے سوامی سے کہا کہ وہ اس معاملے میں فیصلہ آنے کے بعد مناسب طریقے سے اپنی عرضی کا اندراج کراتے ہوئے اس پر جلد سماعت کی گزارش کریں۔ سوامی نے عدالت سے پوجا کرنے کے لئے اپنے حق کو جلدی دلانے کی گزارش کی تھی۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!