Published From Aurangabad & Buldhana

سر سید کالج کے شعبہ اردومیں عالمی سیمینار کا انعقاد

پریس ریلیز

اورنگ آباد:شہر اورنگ آباد اپنے تعلیمی اداروں کے لئے جانا جاتا ہے۔ ان ہی اداروں میں سر سید کالج کا نام سر فہرست ہے۔ سر سید کالج کی بنیاد مرحوم پروفیسر محمد تلاوت علی نے 1990 میں رکھی تھی ۔ مرحوم کی کوششوں اور دن رات کی محنت نے کالج کو ملک بھر میں ایک کامیاب ادارہ ثابت کیا ۔ کالج کی ہمیشہ یہی کوشش رہی ہے کہ طلباءو اساتذہ کے لئے نئی راہیں ہموار کریں اور عالمی منظر نامے پر اپنی پہچان بنائے ۔اسی کے تحت سر سید کالج نے اس موذی بیماری کے باوجود درس و تدریس کے علاوہ عالمی سیمینارکروانے میں پہل کی ہے جو کہ جدید تکنالوجی کے تحت بے حد آسان ہو چکا ہے۔ سر سید کالج میں تقریباً دو ماہ سے کئی عالمی سیمینار منعقدکئے جا چکے ہیں۔اسی کے تحت شعبہ اردوکا ایک عالمی سیمینار بعنوان ” دور حاضر میں اردو تدریس ۔ اہمیت ، مسائل و عصری تقاضے“ بتاریخ ۸جنوری بروزجمعہ عمل میں آیا ۔
پروگرام کے آغاز میں بانی سر سید کالج پروفیسر محمد تلاوت علی صاحب مرحوم کو یاد کیا گیا۔ ڈاکٹر شمامہ پروین ، صدر رہبر ایجوکیشنل کلچرل اینڈ ویلفیئر نے اس پروگرام کے افتتاحی کلمات ادا کئے ۔ کی۔ نوٹ ایڈرس پروفیسر ضیاءالرحمن صدیقی صاحب ، شعبہ اردو ،علی گڑھ مسلم یونیورسٹی نے پیش کیا۔ پرنسپل سر سید کالج ڈاکٹر شیخ کبیر احمد نے کالج کا مکمل تعارف پیش کیا ۔
اس ای سیمینار میں مختلف ملکوں کے کئی عالمی شہر ت یافتہ ماہرین نے حصہ لیا اوردرس و تدریس کے میدان میں ہونے والی تبدیلوں سے متعلق گفتگو فرمائی۔ مہمانان میں پروفیسر ضیاءالرحمن صدیقی ،شعبہ اردو علی گڑھ مسلم یونیورسٹی، پروفیسر یوسف عامر صدر شعبہ اردو جامعتہ الازہر،ڈاکٹر علی بیات اسو سی ایٹ پروفیسرشعبہ اردو یونیورسٹی آف تحران ایران ، پروفیسر آفتاب احمد آفاقی صدر شعبہ اردو بنارس ہندو یونیورسٹی بنارس اور ڈاکٹر ولاءجمال العسیلی عین شمس یونیورسٹی مصر شامل تھے ۔
ان کے علاوہ ملک بھر کے کئی ماہر تعلیم نے اپنے خیالات و مقالوں کے ذریعے بھی موجود صورت حال میں اردو زبان کی تددریس کے شعبوں میں ہورہی ممکنہ کوششوں اور کاوشات پربڑی تفصیلی گفتگوفرمائی۔ان ماہرین میں ڈاکٹر توصیف پرویز ہیڈ آف اردو ڈیپارٹ منٹ MSCERTگارنمنٹ آف مہاراشٹر، پروفیسر سلیم محی الدین صدر شعبہ اردو شری شیواجی کالج، ڈاکٹر محمد فرقان اسسٹنٹ پروفیسر شعبہ اردو ویمن کالج آف علی گڑھ ، پروفیسر مسرت فردوس سابق اُستاذ شعبہ اردو ڈاکٹر بامو اورنگ آباد، ڈاکٹر رفیع الدین ناصر صدر شعبہ نباتیات مولانا آزاد کالج اورنگ آباد، ڈاکٹر قاضی نوید صدر شعبہ اردو مولانا آزاد کالج اورنگ آباد، شیخ عبدالصمد انجنیئر و ماہر تعلیم اورنگ آباد، ڈاکٹر شمشاد علی اسسٹنٹ پریسڈنٹ راجھستان اردو لیکچرر اسوسیشن جئے پور،غلام نبی کمار محقق ریسرچ سکالر و صحافی کشمیر ڈاکٹر زہر جبین صدر شعبہ اردو SSRGویمن کالج کرناٹک،ڈاکٹر شاہجہاں بیگم شعبہ اردو عبدالحق اردو یونیورسٹی کرنول شامل تھے۔
پروگرام کی آرگنائزنگ کمیٹی میں ڈاکٹر وصی اللہ پٹھان وائس پرنسپل سر سید کالج ، ڈاکٹر محمد اظہراسو سی ایٹ پروفیسر شعبہ فزکس ، محمد عرفان سوداگر لیکچرار سر سید کالج شامل تھے۔ ٹیکنیکل ٹیم کے تحت ڈاکٹر عزیز بن ناصر، شیخ مجیب عبدالہادی، راجو صاحب شامل تھے۔
اس سیمینار کے کنوینر ڈاکٹر محمد مصطفی خیری صدر شعبہ عربی سر سید کالج اور کو کنوینر ڈاکٹر صدیقی صائم الدین شعبہ اردو سر سید کالج تھے۔ اختتامیہ اجلاس میں محترمہ ڈاکٹر شمامہ پروین ، چیئر پرسن رہبر ایجوکیشنل ، کلچرل اینڈ ویلفیئر سوسائٹی کی کاوشات کو سرہاتے ہوئے پروفیسر ضیاءالرحمن صدیقی نے ان کی تعریف کی اور انھیں ان تمام عالمی سیمیناروں کی تشکیل و کامیابی پر خصوصی مبارکباد پیش کی ساتھ ہی پرنسپل ڈاکٹرشیخ کبیر احمد کی مستقل مزاجی کی تعریف کی۔ ملک بھر میں سر سید کالج کی ان کاوشات کو کافی سراہا گیا ہے ۔ سیمینار کی کامیابی پر ڈاکٹر شمامہ پروین نے تمام کی مبارکباد پیش کی۔نظامت کے فرائض ڈاکٹر مصطفی خیری اور ڈاکٹر صدیقی صائم الدین نے ادا کیے جبکہ اظہار تشکر کے کلمات پرنسپل ڈاکٹر شیخ کبیر احمد نے پیش کئے۔اس موقع پرملک بھر سے اشخاص کی کثیر تعداد سیمینارمیں شامل رہی۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!