Published From Aurangabad & Buldhana

حکومت ہند کے طلا ق بل کے خلاف میں خواتین احتجاج منظم کرنے کیلئے علماء ،دانشوران ،اور تعلیمی سوسائٹیز کی حمایت

متحدہ مکاتب فکر خواتین احتجاج کیلئے نشستیں ، کارنر میٹ ، خطبات ، اور محلوں میں جاری گشت ملت اسلامیہ میں نئی روح پھونکے گا

جالنہ (محمد اظہر فاضل) چند آزاد خیال و ماڈرن خواتین کی بے تکی آہ و بکا پر حکومت ہند نے مسلم خواتین کو مظلوم بتلاکر ان کی نام نہاد آزادی کے نام پر طلاق بل پارلیمینٹ میں پیش کر دیا ہے ۔جو تاحال التواء کا شکار ہے ۔حکومت کی یہ کوشش نہ صرف مسلم پرسنل لاء میں راست اور کھلی مداخلت ہے بلکہ ان کروڑوں اسلامی شعار خواتین کا استحصال بھی ہے جو اس عائلی قانون کو اپنی جانوں سے زیادہ عزیز رکھتی ہیں ۔ حکومت کے اس غیر دانشمندانہ فیصلہ کے خلاف اصلاح معاشرہ کمیٹی مسلم پرسنل لاء بورڈ کی جانب سے جالنہ میں ان کروڑوں اسلام پسند خواتین کا خاموش احتجاج درج کرنے کی غرض سے خاموش جلو س کو منعقد کئے جا رہے ہیں جس کے لئے جالنہ کے تمام مکاتب فکر کے علماء نے اس مسئلہ پر سنجیدگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اسے منظم کرنے کی تائید کی ہے ۔ ۱۷ فروری کو منعقد اس خواتین جلو س کے لئے تمام ہی مکاتب فکر جالنہ کی جانب سے زبردست تیاریاں کر لی گئی ہیں ۔ جس کے لئے شہر کی اہم چو راہوں پر کارنر میٹنگس ، محلوں میں گشت ، جمعہ کے خطبات ، اور اہم اجلاس منعقد کئے جا رہے ہیں ساتھ ہی اسکولی طالباۃ کو بھی اس مسئلہ کی نوعیت سے آگاہی کرائی جا رہی ہے ۔اس ضمن میں آج شہر کے قدیم تعلیمی ادارہ اردو ہائی اسکول میں خواتین و معلمات کی ایک نشست لی گئی جسمیں مفتی عبدالرحمن نائیگاوی ، پرنسپل محمد افتخار الدین ، مولانا عبدالروف ندوی ، عبدالرزاق کچی ،مولانا عیسی خان کاشفی اور عبدالمجیب نے شرکت کرتے ہوئے سو سے زائد خواتین معلمات کو خواتین جلو س کے متعلق معلومات دی ۔سوشل میدیا پر بھی خواتین کا احتجاجی جلو س،خدمت سوشل گروپ ،اساتذہ و علماء گروپ اور اسطرح کے ناموں کے ساتھ کئی سوشل گروپ تیار کرکے اس جلو س کے متعلق معلومات اس پر وائرل کی جا رہی ہیں ۔دوسری جانب میڈیا سیل کا قیام کیا گیا ہے جو روزانہ کی سرگرمیوں کو شائع کر ارہا ہے ۔جس کی وجہ سے عوامی بیداری بڑے پیمانے پر واقع ہو رہی ہے ۔علماء کرام کے بھی مختلف دستہ تشکیل دیئے جا چکے ہیں جو اپنے طئے شدہ منصوبہ کے تحت اپنے کام کی انجام دے رہے ہیں ۔گذشتہ نیشنل ڈی ایڈ کالج میں خواتین کا اجتماع منعقد کیا گیا ۔کنہیا نگر نیا جالنہ میں بعد نماز ظہر خواتین کی نشست منعقد ہوئی جسمیں خاتون ذمہ دار نے اپنی مخاطبت کی اور ۱۴؍فروری بروز بدھ کو اقصی فنکشن ہال قدیم جالنہ میں دکھی نگر ،یوسف کالونی ، ملت نگر ، نہدی کالونی ،شیر سوار نگر ، امان اللہ پارک ، جل محل ، محلوں پر مشتمل خواتین کا اجلاس بعد نماز ظہر منعقد رہے گا جسمیں جالنہ علماء کرام و خواتین ذمہ داران اپنی مخاطبت کریں گی خواتین کے اس خاموش احتجاجی جلو س کے لئے سرکاری اجازت حاصل کر لی گئی ہے ۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!