Published From Aurangabad & Buldhana

بی ایچ یو: فیروز خان کی سنسکرت ڈپارٹمنٹ میں تقرری پر ہندو طلبا کا مظاہرہ پھر شروع

بنارس ہندو یونیورسٹی (بی ایچ یو) کے ایس وی ڈی وی شعبہ یعنی سنسکرت ودیا دھرم وگیان میں ڈاکٹر فیروز خان کی بطور اسسٹ پروفیسر تقرری کو لے کر ایک بار پھر طلبا کا ہنگامہ شروع ہو گیا ہے۔ کچھ دن پہلے ایس وی ڈی وی سے تعلق رکھنے والے طلبا نے مظاہرہ ختم کر دیا تھا، لیکن پیر کے روز یہ مظاہرہ ایک بار پھر شروع ہو گیا۔ بی ایچ یو کے تمام طلبا نے ڈپارٹمنٹ کے باہر نہ صرف انتظامیہ کے خلاف نعرے بازی کی بلکہ ڈپارٹمنٹ کے دروازے پر تالا بھی لگا دیا۔

ڈاکٹر فیروز خان کی تقرری کے خلاف مظاہرہ کر رہے ہندو طلبا کا کہنا ہے کہ انھوں نے اس تقرری کے متعلق یونیورسٹی انتظامیہ سے جواب مانگا تھا لیکن ابھی تک کوئی رد عمل سامنے نہیں آیا ہے اس لیے دوبارہ مظاہرہ شروع ہو گیا ہے۔ اس سے قبل بی ایچ یو میں 7 نومبر سے شروع ہوا مظاہرہ 22 نومبر کو ختم ہو گیا تھا۔ اس دوران تحریک میں شامل طلبا نے بی ایچ یو انتظامیہ سے بات کی تھی اور تحریری طور پر جواب مانگا تھا۔

یونیورسٹی انتظامیہ نے طلبا کی جانب سے پوچھے گئے سوالوں کا دس دن کے اندر جواب دینے کی یقین دہانی کرائی تھی۔ 2 دسمبر کو 10 دن کی یہ میعاد پوری ہو گئی اور اسی وجہ سے ناراض ہندو طلبا نے اپنا مظاہرہ ایک بار پھر شروع کر دیا۔ یونیورسٹی انتظامیہ کی جانب سے کوئی تحریری جواب نہ ملنے کی وجہ سے سبھی طلبا ڈپارٹمنٹ کے دروازے پر تالا لگا کر ہنگامہ آرائی کرنے لگے۔ احتجاج کر رہے طلبا نے دھرنا دیتے ہوئے وائس چانسلر اور انتظامیہ کے خلاف خوب نعرے بازی کی۔

قومی آوازبیورو

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!