Published From Aurangabad & Buldhana

بدناپور ہفتہ واری بازار کا مسئلہ حل ہوگا یا نہیں ؟

اس مسئلہ پر کب سیاست دانوں کی خاموشی ٹوٹے گی ؟ پنچایت کو لاکھوں کا نقصان

جالنہ (محمد اظہر فاضل اور سید منور بدناپور) نگر پنچایت بدناپور کی صدر ، نائب صدر ،چیرمین ،اراکین پنچایت بدناپور اور سی ای او نگر پنچایت بدناپور کے غیر ذمہ دارانہ رویہ کے سبب نگر پنچایت بدناپور کو گزشتہ دو سال سے لاکھوں کا چونا لگ رہا ہے۔ متعلقہ ہفتہ واری بازار نگر پنچایت نے ہائیکورٹ کی گائیڈ لائین سے لگوانا ضروری تھا لیکن نگر پنچایت کے ذمہ داران تماش بینی کا کردار ادا کر تے دکھائی دے رہے ہیں ۔جس کی وجہ سے پنچایت کو راست طور پر لاکھوں کا معاشی نقصان برداشت کرنا پڑ رہا ہے ۔نگر پنچایت کی منجملہ سرکاری اور غیر سرکاری ٹیم جان بوجھ کر بازار کی نیلامی نہ کراتے ہوئے پرانے ہفتہ واری بازار پر ہی بازار بھرا یا جا رہا ہے اس معاملے میں دانستہ طور پر تغافل کی وجہ سے بدناپور میں نگر پنچایت اور اس میں کام کرنے پہونچے ممبران اور سرکاری افسران شک کے گھیرے میں دکھائی دے رہے ہیں ۔جبکہ شہریان ان امور پر اراکین پنچایت کے دانستہ نظر انداز کرنے کے رویہ پر ششدرہ ہیں عوام الناس کی جانب سے بار بار ہفتہ واری بازار کی نیلامی کرنے کا مطالبہ کیا جا رہا ہے لیکن نگر پنچایت بدناپور اور اس کے ممبران اور سی ای او نے ہفتہ واری بازار پر کوئی ٹھوس پالیسی مرتب نہ کرنے کی وجہ سے پنچایت کو ان دو سالوں میں لاکھوں کا نقصان ہو چکا ہے اگر اس ضمن میں فیصلہ سازی کر لی جاتی تو بدناپور نگر پنچایت کی معاشی حالت میں کافی بہتر ی آئی ہوتی لیکن بازرا کو لیکر جاری ٹال مٹول کے رویہ اپنانے کے پیچھے دیرینہ مقاصد ۔اور لوٹ پاٹ کی بڑے پیمانے پر سازش واضح ہوتی دکھ رہی ہے ۔ہفتہ واری بازار کو لیکر ہائیکورٹ کے فیصلہ پر عمل آوری نہ کرتے ہوئے صدر ،نائب صدر اور اراکین پنچایت کے ساتھ سی ای او پنچایت ہائیکورٹ کے اس فیصلہ کا مذاق اڑاتے دکھائی دے رہے ہیں۔ اس طرح کی تشویش تاجر طبقہ میں محسوس کی جارہی ہے اور ہفتہ واری بازار کا موضوع اب عام ہوتا دکھائی دے رہا ہے ۔اور اس ضمن میں شہر کے اہم مقامات پر عوام کیے درمیان اس موضوع پر بحث کی جا رہی ہے ۔عوام میں یہ بھی تذکرہ جاری ہیکہ ہفتہ واری بازار کو لیکر سرکاری افسران اور عوامی نمائندوں کے ساتھ کسان اور تاجر طبقہ میں کسی بھی قسم کے حتمی فیصلہ لینے کی کوئی راہ دکھائی نہیں دے رہی ہے ۔جس کی وجہ سے یہ مسئلہ مزید پیچیدہ ہوتا دکھائی دے رہا ہے ۔ بدناپور ہفتہ واری بازار کا مسئلہ حل ہوگا یا نہیں ؟ اس مسئلہ پر کب سیاست دانوں کی خاموشی ٹوٹے گی ؟ یہ تو آنے والا وقت ہی بتائے گا ۔۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!