Published From Aurangabad & Buldhana

ایس سی /ایس ٹی قانون :سپریم کورٹ کا فیصلہ پر روک سے انکار

دہلی :سپریم کورٹ نے درج فہرست ذاتوں /درج فہرست قبائل (ایس سی /ایس ٹی)کے خلاف ہونے والی زیادتی کی روک تھام سے متعلق قانون کے معاملہ میں مرکزی حکومت کی نظر ثانی کی عرضی پرسماعت 16مئی تک ملتوی کردی ،لیکن اپنے فیصلہ پر فی الحال روک لگانے سے انکار کردیا۔

مرکزی حکومت کی طرف سے اٹارنی جنرل کے کے وینوگوپال نے جسٹس آدرش کمارگوئل اور جسٹس ادے امیش للت کی بنچ کے سامنے دلیل دی کہ ایس سی /ایس ٹی قانون کے سلسلہ میں دیئے گئے فیصلہ پر بنچ کو روک لگادینی چاہئے ،کیونکہ عدالت اس طرح قانون نہیں بناسکتی ۔یہ اس کے دائرہ اختیار میں نہیں ہے ۔آئین نے عدلیہ ،مقننہ اور ایگزیکٹیوکے اختیارات طے کئے ہیں ۔

اٹارنی جنرل نے کہاکہ عدالت کے اس حکم کے بعد 200سے زیادہ برسوں سے زیادتی کے شکار لوگوں کے اعتماد پر اثر پڑاہے ۔

انھوں نے اس فیصلہ پر نظرثانی کے لئے معاملہ کو بڑی بنچ کے پاس بھیجنے اور فیصلہ پر روک لگانے کی درخواست کی ۔

عدالت نے فی الحال اپنے فیصلہ پر روک لگانے سے انکار کرتے ہوئے سماعت 16مئی تک کے لئے ملتوی کردی اور سبھی فریقوں کو اس دن اپنی جرح مکمل کر لینے کو کہا۔

عدالت نے اس سے پہلے سماعت کے دوران کہاکہ اسکا فیصلہ یہ نہیں ہے کہ کسی معاملہ میں ایف آئی آر درج نہ کی جائے یا قصور وارکو سزا نہ ملے ،بلکہ اس نے صرف یہ کہاہے کہ کسی کو گرفتار کرنے سے پہلے جانچ کی جائے اور اگر ضرورت ہو تبھی گرفتار کیا جائے ۔

واضح رہے کہ مرکز نے دواپریل کو اس معاملہ میں نظر ثانی کی عرضی دائر کی ہے ،جس میں کہا گیاہے کہ عدالت کے 20مارچ کے فیصلہ سے متعلقہ قانون ہلکا ہواہے ۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!