Published From Aurangabad & Buldhana

اورنگ آباد: میونسپل کارپوریشن کے 1450ٹینڈرس میں سے 993کاموں کے لئے کسی نے نہیں بھرا ٹینڈر!!

اورنگ آباد: امسال میونسپل کارپوریشن کی جانب سے اپنے بجٹ میں اضافہ کر 2020کروڑ روپئے کردینے کے باوجود میونسپل کارپوریشن میں بلوں کی وقت پر ادائیگی نہ ہونے کے بنا پر کانٹریکٹرس جاری ٹینڈرس میں حصہ نہیں لے رہے ہیں۔

میونسپل کمشنر سے ملی معلومات کے مطابق امسال 1/اپریل سے 30/ جون کے درمیان 1450ای ٹینڈرس نکالے گئے تھے جس میں سے 993کاموں کے لئے کسی نے ٹینڈر نہیں بھرا ہے۔ باقی 457ای ٹینڈرس میں سے صرف 44ای ٹینڈرس کو کھولا گیا ہے اس لئے کہ ان میں 3لوگوں نے بولیاں لگائی ہیں۔

قوائد کے مطابق کوئی بھی ٹینڈر جس میں 3سے کم بولیاں لگی ہوں اسے دوبارہ جاری کرنا لازم ہوتا ہے۔ سابقہ 18ماہ میں میونسپل کارپوریشن کی جانب سے کا مکمل ہونے کے بعد کانٹریکٹرس کے بل کا بقایہ ادا نہ ہونے کی وجہ سے کانٹریکٹرس نے ان ٹینڈرس بولی لگانے سے خود کو الگ رکھا ہے۔ اپنے بقایہ کے لئے کانٹریکٹرس نے کئی مرتبہ نمائندگی کی، احتجاج کیا اور بھوک ہڑتال بھی کی لیکن کچھ حاصل نہ ہوا۔ میونسپل کارپوریشن نے کانٹریکٹرس کے 31دسمبر 2017تک کے ہی بقایہ بل ادا کیے ہیں اور 1جنوری 2018تک مکمل ہوئے 330کروڑ روپئے کے کاموں کا بقایہ ادا کرنا باقی ہے۔

معاشی سال 2018-19میں میونسپل کارپوریشن نے اپنے بجٹ کو بڑھا کر 1862کروڑ روپئے کیا تھا لیکن ٹھیک سے ٹیکس جمع نہ کرنے سے یہ 1000کروڑ روپئے کی کمی کے بعد 831.43کروڑ روپئے ہوگیا تھا۔ میونسپل کارپوریشن کے افسر کے مطابق ”اورنگ آباد میونسپل کارپوریشن امسال اپنے محصول کو جمع کرنے پر زور دے گی جس میں تقریباً 80,000غیر قانونی عمارتوں سے ٹیکس کیا جائیگا اور غیر قانونی نل کنیکشن کو ختم کر بقایہ پانی ٹیکس کو جمع کیا جائیگا۔ ساتھ ہی پارکنگ کی نئی پالیسی،کمرشیل لائسنس کی اجرائی جیسے فیصلے لئے جائینگے“۔

میونسپل افسر کے مطابق ان ذرائع سے انہیں 500کروڑ روپئے کا محصول جمع ہونے کی امید ہے۔ اس معاملے میں جب انگریزی اخبار ٹائمز آف انڈیا نے میونسپل کمشنر نپون ونائک سے رابطہ کرنے کی کوشش کی لیکن انہوں جواب نہیں دیا۔ اس معاملے کو لیکر ایک کانٹریکٹر نے کہا کہ میونسپل کارپوریشن کو نئے ٹینڈرس جاری کرنے سے قبل بقایہ بلوں کی ادائیگی کرنی چاہیے۔ ان بقایہ کی ادائیگی نہ ہونے کی وجہ سے کانٹریکٹرس قرض کا شکار ہوگئے ہیں۔

ایک دوسرے کانٹریکٹر نے بتایا کہ ہم جب بھی اپنے بقایہ کے لئے کارپوریشن سے سوال کرتے ہیں تو ہمیں خالی وعدے ہی ملتے ہیں۔ ہم نے ان کاموں کو مکمل کرنے کے لئے قرض لئے تھے، لیکن ہمارے بقایہ بل ادا کرنے کے بجائے میونسپل کارپوریشن ہمیں ڈرا رہی ہے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!