Published From Aurangabad & Buldhana

اورنگ آباد: دولاکھ کے قرض کی ادائیگی میں مشکلات سے عاجز کاربھاری شیلکے نے پھانسی لے لی‘ سوسائڈ نوٹ میں مراٹھا ریزرویشن کاذکر

اورنگ آباد:۱۰؍ اگست ( اسٹاف رپورٹر )مراٹھا ریزرویشن کے مطالبہ پر آج علی الصبح ایک ۴۳؍سالہ مراٹھا شخص نے خودکشی کرلی۔گارکھیڑہ علاقہ کے وجئے نگرکے ساکن کاربھاری داداراؤ شیلکے (۴۳)نے آج علی الصبح ساڑھے تین بجے اپنے گھرمیں پھانسی لے کرخودکشی کرلی۔ شیلکے کے پسماندگان میں بیوہ اوردولڑکے شامل ہیں۔اس ضمن میں پنڈلک نگرپولس اسٹیشن میں حادثاتی موت کااندراج کرلیاہے۔ پولس نے بتایاکہ شیلکے وجئے نگر گارکھیڑہ کاساکن تھا اس نے آج علی الصبح اپنے گھرمیں لوہے کے اینگل سے رسی کاپھندہ بناکرپھانسی لی ۔

گھروالوں نے اسے گھاٹی اسپتال شریک کیالیکن ڈاکٹرس نے جانچ کے بعداسے مردہ قراردیا۔خودکشی سے قبل شیلکے نے ایک سوسائڈ نوٹ بھی تحریرکیاتھاجس میں کہاگیاکہ میں مراٹھا ریزرویشن کے مطالبہ پرخودکشی کررہاہو ں اسطرح کی بات کہی گئی۔ آج جب یہ معاملہ اجاگرہوتب اطراف واکناف کے مراٹھا نوجوان شیلکے کے گھر پہنچے اورحکومت کے خلاف نعرے بازی کی۔ شیلکے امررہے اسطرح کے فلک شگاف نعرے لگائے گئے۔

مراٹھا نوجوانوں کی بھیڑ پر قابوپانے میں پولس کوکافی مشقت کاسامناکرناپڑا۔ موقع واردات اورپنڈلک نگرپولس اسٹیشن میں اعلی افسران نے معاملہ کاجائزہ لیا۔ رات دیرگئے تک اس علاقہ میں تناؤ کی صورتحال بنی رہی۔پولس کابندوبست تعینات کیاگیاہے۔ مراٹھا کرانتی مورچہ کے ممبران نے مطالبہ کیاکہ چونکہ شیلکے نے مراٹھا ریزرویشن کیلئے اپنی جان دی ہے ۔اسلئے اس کے ورثاء کوپچیس لاکھ معاوضہ اورایک لڑکے کونوکری دی جائے۔ ضلع انتظامیہ نے اس معاملہ کوسنجیدگی سے لیتے ہوئے مطالبہ کی یکسوئی کاتیقن دیا۔موصولہ تفصیلات کے مطابق کاربھاری شیلکے پرشری رام فائنانس کا دولاکھ کاقرض تھاجس کی ادائیگی اس کے لئے مشکل ہوتی جارہی تھی۔ایسالگ رہاہے کہ مراٹھا نوجوان اپنی ذاتی مشکلات اورپریشانیوں سے عاجز آکر خودکشی کاراستہ اختیارکررہے ہیں تاکہ ان کے ورثا کوحکومتی امداد مل سکے ۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!