Published From Aurangabad & Buldhana

اورنگ آباد: این سی پی بہوجن ونچت اگھاڑی سے اتحادکرنے کوشاں ,جینت پاٹل کی امبیڈکرواویسی سے گفتگو

اورنگ آباد: ۱۱؍اکتوبر ( اسٹاف رپورٹر )مجلس اتحادالمسلمین کو بی جے پی کی بی ٹیم کہنے والے کانگریس این سی پی قائدین اب مجوزہ پارلیمانی واسمبلی انتخابات میں بی جے پی کوشکست سے دوچارکرنے کے ساتھ ساتھ دوبارہ اقتدارحاصل کرنے کیلئے پرکاش امبیڈکراور بیرسٹر اسدالدین اویسی کی بہوجن ونچت اگھاڑی سے انتخابی اتحاد کیلئے کوشاں دکھائی دے رہے ہیں۔اس انتخابی اتحادکیلئے گفتگووملاقاتوں کادورشروع ہوچکاہے ۔این سی پی کے ریاستی صدر جینت پاٹل نے اس بات کی وضاحت کرتے ہوئے کہاکہ بھاریپ کے پرکاش امبیڈکر اورمجلس کے اسدالدین اویسی سے بھی اس ضمن میں حال ہی میں پہلے مرحلہ کی گفتگوہوئی۔

جینت پاٹل نے مزیدکہاکہ ہمارامقصد ملک اورریاست میں فرقہ پرست طاقتوں کوشکست سے دوچارکرناہے۔اس مقصدکے پیش نظرہم ریاست کی تمام سیکولرپارٹیوں کوایک پلیٹ فارم پرلانے کی کوشش کررہے ہیں تاکہ سیکولر ووٹوں کی تقسیم نہ ہوسکے ۔سیکولرووٹوں کی تقسیم کے سبب ہی بی جے پی نے مرکزی وریاستی اقتدارحاصل کیاتھا۔دوسری جانب پرکاش امبیڈکرنے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہاکہ کانگریس کیلئے وہ ایم آئی ایم کاساتھ نہیں چھوڑیں گے۔جینت پاٹل نے تھانہ میں حال ہی میں منعقدہ ایک پارٹی اجلاس میں صاف کہاکہ مودی سرکارکے سبب مہنگائی آسمان چھورہی ہے۔

پٹرول ڈیزل کی قیمتیں مسلسل بڑھتی ہی جارہی ہیں۔اسلئے اس حکومت کو جڑسے اکھاڑ پھینکنا وقت کی اہم ترین ضرورت ہے۔تاکہ عوام الناس کوراحت مل سکے۔ اگر سابقہ یوپی اے حکومت اورموجودہ این ڈی اے حکومت کے دورمیں پٹرول ڈیزل کی قیمتوں کاموازنہ کیاجائے تو فرق واضح ہوجائیگا۔حال ہی میں اورنگ آباداورشولاپورمیں بہوجن ونچت اگھاڑی کے تاریخی اجلاس منعقدکیے گئے۔جس میں باضابطہ اسدالدین اویسی اورپرکاش امبیڈکر نے شرکت کی اورخطاب کیے۔دونوں قائدین نے دلت اورمسلم ووٹوں کو متحدکرنے کیلئے اورحکومت میں اپنی حصہ داری پانے کابگل بجایا۔گزشتہ سترسالوں میں دلت ومسلم طبقات مسلسل ناانصافی کاشکاررہے ہیں۔ان کے ساتھ جوناانصافی ہوئی ہے وہ محض اقتدارسے دوررہنے کے سبب ہوئی۔ کانگریس این سی پی کے ساتھ ساتھ بی جے پی شیوسیناحکومت نے بھی ہرمورچہ پر ان دونوں طبقات کو پسماندگی کے قعرمذلت میں ڈھکیل دیاہے۔ یہی وجہ ہے کہ ان دونوں طبقات کو متحدہوناضروری ہے ۔پرکاش امبیڈکر نے کانگریس پرالزام عائدکیاکہ ہم نے کانگریس کواتحادکی پیشکش کی تھی۔لیکن انہوں نے ہماری بات نہیں مانی۔ وہ مجلس کودوررکھ کر ہمارے ساتھ اتحادکرناچاہتے ہیں۔ لیکن کانگریس کویہ بھولنانہیں چاہئے کہ کیرلامیں کانگریس نے مسلم لیگ کے ساتھ انتخابی اتحادکیاتھاتب مجلس سے اتحادکرنے میں کیاقباحت ہے ۔

این سی پی سے اب تک کوئی بات چیت نہیں‘امتیازجلیل
این سی پی کے ریاستی صدر جینت پاٹل کا بہوجن ونچت اگھاڑی سے انتخابی اتحادکے ضمن میں دیے گئے بیان کے ضمن میں جب ایشیاایکسپریس کے نمائندہ نے مجلس کے رکن اسمبلی سیدامتیازجلیل سے ربط کیااور استفسار کیاکہ کیااسدالدین اویسی سے جینت پاٹل کی سیاسی اتحادکے ضمن میں گفت وشنیدہوئی ہے؟ توانہوں نے کہاکہ مجھے اس بات کاکوئی علم نہیں ہے۔اب تک ایسے کوئی بات چیت نہیں ہوئی ہے۔اگر جینت پاٹل کی مجلس کے کسی ریاستی نمائندہ سے گفتگو ہوئی ہوتووہ کھل کر بتائیں۔امتیازجلیل نے دعوی کیاکہ جب سے اورنگ آباد میں بہوجن ونچت اگھاڑی کاریکارڈ توڑاجلاس ہواہے دیگر سیاسی پارٹیوں کے پیروں تلے زمین کھسک گئی ہے۔ آخرکارہمیں بی جے پی کی بی ٹیم بتانے والوں کوہمارے ساتھ سیاسی اتحادکی ضرورت کیوں پڑگئی؟ انہوں نے کہاکہ ہماری خواہش ہے کہ مجوزہ انتخابات میں بی جے پی شکست سے دوچارہو‘ لیکن کانگریس کی جانب سے اب تک اس معاملہ میں واضح اقدام نہیں کیاگیاہے اورپرکاش امبیڈکرنے پہلے ہی این سی پی سے اتحادسے انکارکردیاتھا۔ہم لوگ کسی بھی حال میں بہوجن ونچت اگھاڑی کے دوستانہ ماحول کوبیان بازی کے ذریعہ خراب نہیں کرناچاہتے۔ریاست میں امبیڈکراورہم دیگرپارٹیوں کوشکست سے دوچارکرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!