Published From Aurangabad & Buldhana

اورنگ آبادکانام سنبھاجی نگر ہرگزمنظورنہیں‘ ہرش وردھن جادھو کھیرے کی بیس سالہ سیاست جلداختتام کوپہنچے گی

اورنگ آباد: ۳۱؍ اکتوبر ( اسٹاف رپورٹر )شیوسینا کے باغی رکن اسمبلی اورشیوراجیہ پارٹی کے بانی صدر ہرش وردھن جادھو نے اورنگ آبادکانام سنبھاجی نگر رکھنے کی سخت مخالفت کی ہے۔انہوں نے اپنے ایک بیان میں کہاکہ گزشتہ بیس سالوں سے رکن پارلیمنٹ چندرکانت کھیرے اورنگ آبادکانام تبدیل کرکے سنبھاجی نگرکرنے کی کوشش کررہے ہیں۔پارلیمانی اسمبلی اورمیونسپل انتخابات سے قبل تشہیر ی مہم میں اسے بارہا موضوع بناکر رائے دہندگان کوبیوقوف بنایاگیا۔ لیکن سوال یہ ہے کہ نام کی تبدیلی سے شہرکی ترقی نہیں ہوسکتی۔چندرکانت کھیرے بارہا اورنگ آباد کانام تبدیل کرنے کیلئے دیویندر پھڑنویس سے مطالبہ کررہے ہیں۔

بیس سال اقتدار کرنے کے باوجودایسا نہ کرنے پرانہوں نے اپنے عہدہ سے استعفیٰ پیش کردیناچاہئے تھا۔مجوزہ پارلیمانی انتخابات میں چندرکانت کھیرے کے خلاف میدان میں اترنے کااعلان کرنے والے ہرش وردھن جادھونے راست طورپر انہیں نشانہ بناناشروع کردیاہے۔انہوں نے کہاکہ ضلع بھرمیں کھیرے نے اپنے دورمیں کوئی ترقیاتی کام انجام نہیں دیے۔لیکن مذہبی منافرت اورفرقہ پرست کے نام پروہ ووٹ بٹورنے میں کامیاب رہے۔

لیکن اب ان کی یہ نوٹنکی مزید نہیں چلے گی۔ عوام بیدارہوچکی ہے۔گزشتہ چارسالوں سے کھیرے اوران کے ساتھی قائدین بی جے پی کی مخالفت کررہے ہیں۔لیکن اقتدار سے چمٹے ہوئے ہیں۔شیوسینا میں اگردم ہے تو وہ انتخابات سے قبل بی جے پی سے علیحدہ ہوجائے۔اس سے صاف ظاہرہوتاہے کہ یہ دوہری پالیسی پرچلنے والی پارٹی ہے۔ عوام کویہ بات سمجھ میں آچکی ہے۔اورنگ آبادضلع میں ہرش وردھن جادھو جگہ جگہ اجلاس منعقدکرکے عوام کوچندرکانت کھیرے کی ناکامیوں سے واقف کروارہے ہیں۔ یوپی کے وزیراعلی الہ آبادکانام تبدیل کرکے پریاگ راج کرسکتے ہیں تو مہاراشٹر میں کیوں نہیں ؟ بی جے پی ایسانہیں کرناچاہتی۔ وہ ترقی کی بنیادپر ووٹ حاصل کرنا چاہتی ہے لیکن شیوسینا سنبھاجی نگرکے موضوع کوپھرسے اٹھاناچاہتی ہے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!