Published From Aurangabad & Buldhana

اورنگ آباد:بجلی کے 8.64 لاکھ روپئے کے غلط بل کی وجہ سے سبزی فروش نے پھانسی لیکر کی خود کشی

بجلی کا بل 1000 روپئے ماہانہ آنے کے بجائے مہاوترن کی غلطی سے آیا تھا 8.64 لاکھ

اورنگ آباد:- شہر کے ایک سبزی فروش نے بجلی کا ایک ماہ کا بل 8.64 لاکھ روپئے آیا تھا جو کہ مہاوترن کے ریڈنگ لینے والے کی غلطی سے ہوا تھا۔ مہاوترن سے بار بار شکایت کرنے ہر مسئلہ حل نہ ہونے کی وجہ سے پریشان ہوکر خود کشی کرلی۔
جگن ناتھ نیہا جی شیلکے جس کی عمر 36 سال، اپنے بجلی کے بل کو لیکر اور اس معاملہ کی شکایت لیکر مہاوترن کے چکر لگاتے پریشان ہو کر آج پھانسی لےلی۔
تفصیلات کے مطابق شیلکے کو MSEDCL کی جانب سے اپریل کے آخری ہفتہ میں 61178 بجلی یونٹ بتاتے ہوئے 8.64 لاکھ روپئے کا بل تھما دیا گیا تھا جبکہ اصل میں شیلکے کی جانب سے استعمال شدہ بجلی یونٹ 6117.8 تھے۔ جسکا بجلی بل 2803 روپئے بنتا ہے۔ بجلی ریڈنگ کی یہ گڑ بڑ ریڈنگ لیتے وقت لکھنے میں غلطی کی وجہ سے ہوئی تھی۔
شہر میں یہ حادثہ پنڈلک نگر پولس اسٹیشن علاقہ کے بھارت نگر محلہ میں ہوا۔ شیلکے نے ایک خود کشی خط بھی لکھ چھوڑا تھا جس میں لکھا ہیکہ اس بجلی بل اور اس میں تصیح کو لیکر دفتر کے چکر لگاتے پریشان ہوگیا تھا۔ جبکہ شیلکے کے گھر کا بجلی بل اوسطاً 1000 روپئے آتا تھا۔
مہاوترن اس غلطی کو لیکر اکاؤنٹ اسیسٹنٹ سشیل کا شی ناتھ کولی کو اپنی ذمہ داری ٹھیک سے نہ نبھانے کی بنیاد پر معطل کردیا ہے۔
پہلے جو MSEDCL شیلکے کی موت سے اپنا پلا جھاڑ رہا تھا شیلکے کے خودکشی کے خط کے سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کی وجہ سے اب اس نے اپنے ملازم کے خلاف کاروائی کر سی ہے۔
شیلکے کے رشتہ داروں نے اس معاملہ میں احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ جو عہدہ داران اس کے لئے ذمہ دار ہیں جب تک انکی گرفتاری عمل میں نہیں آتی تب تک ہم شیلکے کی لاش کی آخری رسومات ادا نہیں کریں گے۔ واضح رہے کہ شیلکے کی لاش مردہ گھر میں ہی رکھی ہوئی ہے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!