Published From Aurangabad & Buldhana

اردو کے مشہور افسانہ نگار قاضی عبدالستار اب اس دنیا میں نہیں رہے

پدم شری پروفیسر قاضی عبدالستار کے انتقال کی خبر سے علمی اور ادبی حلقوں میں غم کا ماحول ہے

اردو کے مشہور افسانہ نگار، پدم شری اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں شعبہ اردو کے سابق استاد پروفیسر قاضی عبدالستار کا مختصر علالت کے بعد آج دلی میں انتقال ہو گیا۔ ان کی تدفین علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے منٹو ای قبرستان میں عمل میں آئے گی۔ قاضی عبدالستار کے پسماندگان میں دو بیٹے اور ایک بیٹی ہیں ۔ پدم شری پروفیسر قاضی عبدالستار کے انتقال کی خبر سے علمی اور ادبی حلقوں میں غم کا ماحول ہے۔ ان کی عمر 88 سال تھی۔

ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ یافتہ قاضی عبد الستار کے ایک سے زیادہ شاگرد مختلف شعبہ ہائے زندگی میں نمایاں خدمات انجام دے رہے ہیں۔ ان کے مداحوں کی بھی فہرست طویل ہے۔ وہ ایک انتہائی اچھے استاد تھے اور مرحوم کا شمار اپنے عہد کے نمایاں افسانہ نگاروں میں ہوتا تھا- ان کے افسانوں میں پیتل کا گھنٹہ اور ناولوں میں حضرت جان اور داراشکوہ بہت مقبول ہوئے- ان کو زبان و بیان پر جو غیر معمولی قدرت حاصل تھی اس کا اندازہ ان کی تحریروں سے بہ آسانی لگایا جا سکتا ہے۔

ان کے عزیز شاگرد عبید صدیقی کے مطابق زندگی کے آخری برسوں میں ان کو بہت سے صدمات سے دوچار ہونا پڑا مگر انهوں نے اپنی پریشانیوں کا اظہار اپنے چہرے بشرے اور وضع قطع سے کبھی نہیں ہونے دیا۔عبید صدیقی نے مرحوم کی زندگی اور ادبی کارناموں پر ان کی زندگی میں ہی ایک دستاویزی فلم بنائی تھی جو یو ٹیوب پر دستیاب ہے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!