Published From Aurangabad & Buldhana

آسام میں ممبران اسمبلی کی تنخواہ میں 50فیصد اضافہ

وزیر اعلیٰ کی تنخواہ ہوئی 1.6 لاکھ ماہانہ

گوہاٹی:- آسام کی اسمبلی نے جمعہ کے تین بلوں کو اتفاق رائے سے منظوری دے دی ہے جسکے تحت ممبران اسمبلی کی تنخواہ میں 50 فیصد کا اضافہ کردیا ہے۔
آسام اسمبلی کے اسپیکر ہتیندرناتھ گوسوامی نے بتایا کہ عموماً اسمبلی کی سہولیات والی کمیٹی تنخواہوں میں اضافہ پیش کرتی تھی لیکن پہلی مرتبہ ایسا ہوا ہیکہ مشاہرہ کمیٹی نے یہ عمل انجام دیا ہے۔
منظور شدہ تینوں قوانین کے مطابق اسمبلی اسپیکر، نائب اسپیکر، وزیر اعلی، تمام ریاستی وزرا، حسب مخالف کے لیڈر، تمام ممبران اسمبلی اور سابق ممبران اسمبلی کی پینشن سے متعلق تبدیلیاں 1 اپریل سے لاگو ہوں جائینگی۔
اسمبلی اسپیکر اور نائب اسپیکر کی موجودہ تنخواہیں 80,000 اور 75,000 روپئے سے بڑھ کر 1.2 لاکھ اور 1 لاکھ ہو چکی ہے۔ تنخواہ کے علاوہ دونوں کو دیگر چیزوں کے لیے 30 ہزار روپئے ملیں گے۔
وزیر اعلیٰ کی تنخواہ 90 ہزار سے بڑھ کر 1.3 لاکھ اور دیگر چیزوں کے لیے17 ہزار سے بڑھ کر 34 ہزار روپئے ہوگئی ہے۔ اس طرح کل تنخواہ 1.62 لاکھ روپئے ملے گی۔
دیگر کابینی وزرا اور حسب مخالف کے لیڈر کی تنخواہ 80 ہزار سے بڑھ کر 1.1 لاکھ روپئے اور دیگر چیزوں کے لیے 15 ہزار سے بڑھ کر 30 ہزار روپئے ہوگئی ہے۔
اسی طرح وزرائے مملکت کی تنخواہ 75 ہزار سے بڑھ کر 1 لاکھ، نائب وزرا کی تنخواہ 70 ہزار سے بڑھ کر 95 ہزار، ممبران اسمبلی کی 60 ہزار سے بڑھ کر 60 ہزار روپئے ہوگئی ہے۔

You might also like

Subscribe To Our Newsletter

You have Successfully Subscribed!